490

سوال_ کیا اکیلا محمد نام رکھنا جائز ہے؟ کئی لوگ کہتے ہیں کہ اکیلا محمد نام نہیں رکھنا چاہیے؟ اور کیا محمد نام رکھنے کی کوئی فضیلت و برکت صحیح احادیث سے ثابت ہے؟ جیسا کہ کہا جاتا ہے کہ محمد نام والے سب لوگوں کو بخش دیا جائے گا؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-307”
سوال_ کیا اکیلا محمد نام رکھنا جائز ہے؟ کئی لوگ کہتے ہیں کہ اکیلا محمد نام نہیں رکھنا چاہیے؟ اور کیا محمد نام رکھنے کی کوئی فضیلت و برکت صحیح احادیث سے ثابت ہے؟ جیسا کہ کہا جاتا ہے کہ محمد نام والے سب لوگوں کو بخش دیا جائے گا؟

Published Date: 18-11-2019

جواب!!
الحمدللہ

*اگرچہ اس مسئلہ میں علماء کا اختلاف ہے،کچھ علماء یہ کہتے ہیں کہ بچوں کے نام ساتھ محمد لگا سکتے ہیں مگر صرف محمد نہیں رکھ سکتے، بعض کے ہاں محمد نام رکھ سکتے ہیں مگر آپکی کنیت ابو القاسم نہیں رکھ سکتے، مگر راجح بات یہی ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نام پر بچوں کا نام صرف محمد رکھنا اور آپکی کنیت پر انکی کنیت ابو القاسم رکھنا بھی جائز ہے، اور شرعی طور پر اس میں کوئی حرج نہیں*

*صرف محمد نام رکھنے کے دلائل*

📚ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ،رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا،
تَسَمَّوْا بِاسْمِي ، وَلَا تَكْتَنُوا بِكُنْيَتِي۔۔!
( اپنی اولاد ) کا میرے نام کے اوپر نام رکھو۔ مگر میری کنیت اختیار نہ کرو۔۔!
(صحیح بخاری حدیث نمبر- 110)

📚 حضرت جابر عبد اللہ رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت کہا کہ : ہم ( انصار ) میں سے ایک شخص کے ہاں لڑکا پیدا ہوا اس نے اس کا نام محمد رکھا ہم نے اس سے کہا : ہم تمھیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی کنیت سے نہیں پکاریں گے ۔ یہاں تک کہ تم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ( اس بات کی ) اجازت لے لو ۔ سووہ شخص آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور کہا کہ اس کے ہاں لڑکا پیدا ہوا ہے ، تو میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر اس کا نام رکھا ہے اور میری قوم نے اس بات سے انکا ر کر دیا ہے کہ مجھے اس کے نام کی کنیت سے پکا ریں یہاں تک کہ تم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اجازت لے لو ۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فر ما یا : میرے نام پر نام رکھو لیکن میری کنیت پر کنیت نہ رکھو ، بے شک میں قاسم بنا کر بھیجا گیا ہوں ، تمھا رے درمیان ( اللہ کا دیا ہوا فضل ) تقسیم کرتا ہوں
(صحیح مسلم،كِتَابٌ : الْآدَابُ | بَابٌ : النَّهْيُ عَنِ التَّكَنِّي بِأَبِي الْقَاسِمِ،حدیث نمبر-2133)
(صحیح بخاری حدیث نمبر- 3114)

*ان احادیث سے ثابت ہوا کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے خود فرمایا کہ میرے نام پر نام رکھو، مگر کنیت رکھنے سے منع فرمایا تھا وہ بھی ایک وجہ سے*

جیسا کہ اسکی وضاحت اس حدیث سے ہوتی ہے،

📚انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ایک مرتبہ بازار میں تھے۔ کہ ایک شخص نے پکارا یا ابا القاسم! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی طرف دیکھا۔ ( کیونکہ آپ کی کنیت ابوالقاسم ہی تھی ) اس پر اس شخص نے کہا کہ میں نے تو اس کو بلایا تھا۔ ( یعنی ایک دوسرے شخص کو جو ابوالقاسم ہی کنیت رکھتا تھا )
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم لوگ میرے نام پر نام رکھا کرو لیکن میری کنیت تم اپنے لیے نہ رکھو۔
(صحیح بخاری،حدیث نمبر-2120)

*اس حدیث سے علمائے کرام نے یہ مسئلہ اخذ کیا ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ میں آپ کی کنیت کسی کے لیے رکھنا جائز نہ تھا،کیونکہ اس سے نام خلط ملط ہونے کا مسئلہ تھا، لیکن اب چونکہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس دنیا میں موجود نہیں ہیں اور وہ قباحت لازم نہیں آتی جو اس وقت آتی تھی ، لہذا اب کسی کا نام محمد اور کنیت ابو القاسم ہو تو یہ جائز ہے۔اس میں‌ کوئی قباحت نہیں*

لہذٰا اسکی وضاحت بھی ایک روایت میں اس طرح سے آئی ہے،

سنن ابي داود/كِتَاب الْأَدَب
باب فِي الرُّخْصَةِ فِي الْجَمْعِ بَيْنَهُمَا
باب: محمد نام اور ابوالقاسم کنیت جمع کرنے کی اجازت کا بیان،

📚حضرت علی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں
میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول!
إِنْ وُلِدَ لِي مِنْ بَعْدِكَ:‏‏‏‏ وَلَدٌ أُسَمِّيهِ بِاسْمِكَ، ‏‏‏‏‏‏وَأُكَنِّيهِ بِكُنْيَتِكَ،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ نَعَمْ
اگر آپ کے بعد میرے بیٹا پیدا ہو تو میں اس کا نام اور اس کی کنیت آپ کے نام اور آپ کی کنیت پر رکھوں؟
آپ نے فرمایا: ہاں،
(سنن ابو داؤد،حدیث نمبر-4967)

سنن ترمذی میں کچھ اس طرح الفاظ ہیں،

📚کہ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے کہا کہ، اے اللہ کے رسول!
أَرَأَيْتَ إِنْ وُلِدَ لِي بَعْدَكَ أُسَمِّيهِ مُحَمَّدًا وَأُكَنِّيهِ بِكُنْيَتِكَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَكَانَتْ رُخْصَةً لِي،
آپ کا کیا خیال ہے اگر آپ کے انتقال کے بعد میرے یہاں لڑکا پیدا ہو تو کیا میں اس کا نام محمد اور اس کی کنیت آپ کی کنیت پر رکھ سکتا ہوں؟ آپ نے فرمایا: ”ہاں“۔ ( ایسا کر سکتے ہو )،
علی رضی الله عنہ کہتے ہیں:
یہ میرے لیے رخصت تھی،
(سنن ترمذی حدیث نمبر-2843)

اس حدیث کی بنا پر کچھ علماء اسکو صرف علی رضی اللہ عنہ سے خاص کرتے ہیں، مگر صحیح بات یہی ہے کہ یہ حضرت علی رضی اللہ عنہ کا اپنا وہم تھا کہ یہ اجازت صرف انکے لیے، بلکہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے جو اجازت دی ہے وہ سب کے لیے عام ہے، جیسا کہ امام ابو داؤد رحمہ اللہ نے اس حدیث پر باب باندھا ہے، اور جو ممانعت تھی وہ صرف آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی زندگی تک خاص تھی،

*اسی بنا پر کئی صحابہ کرام نے اپنے بیٹوں کا نام محمد رکھا اور ان کی کنیت ابوالقاسم تھی، مثلاً :سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کے بیٹے ابوالقاسم محمد بن ابو بکر صدیق، اور سیدنا علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہ کے بیٹے ابوالقاسم محمد بن علی بن ابی طالب، وغیرھما*

*لہٰذا اکیلا “محمد” نام رکھنا اور ابو القاسم کنیت رکھنا جائز ہے اور یقیناً یہ ایک بہت ہی پیارا اور خوبصورت ترین نام ہے*😘😘

___________&___________

*یقیناً اسم محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بہت ہی پیارا نام ہے اور جس ذات کا یہ نام تھا وہ اللہ کے سب سے محبوب پیغمبر تھے، لیکن اسکے باوجود اسم محمد کی فضیلت و برکت کسی بھی صحیح حدیث سے ثابت نہیں*

سلف صالحین میں سے کسی ایک سے بھی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے مبارک نام سے تبرک حاصل کرنا ثابت نہیں،حالانکہ اسلافِ امت،یعنی صحابہ و تابعین اور ائمہ دین، سب سے بڑھ کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی تکریم و تعظیم کرنے والے تھے،نیز قرآن و حدیث کی نصوص بہ خوبی ان کے مد نظر تھیں۔
بعض الناس کا کہناہے کہ اسم ’’محمد‘‘(صلی اللہ علیہ وسلم)سے تبرک حاصل کرنا جائز ہے۔اس حوالے سے ان کا دامن دلائل سے تو خالی ہے،البتہ غلو سے بھرپور ہے۔ان کے مزعومہ دلائل کا مختصر اور جامع جائزہ پیش خدمت ہے:

📚دلیل نمبر 1 :
سیدنا ابو امامہ باہلی رضی اللہ عنہ سے منسوب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
’مَنْ وُّلِدَ لَہٗ مَوْلُودٌ، فَسَمَّاہُ مُحَمَّدًا تَبَرُّکًا بِہٖ؛ کَانَ ہُوَ وَمَوْلُودُہٗ فِي الْجَنَّۃِ‘ ۔
’’جس نے اپنے پیدا ہونے والے بچے کا نام تبرکاً محمد رکھا،وہ اور اس کا بچہ دونوں جنتی ہوں گے۔‘‘
(فضائل التسمیۃ لابن بکیر : 30، مشیخۃ قاضي المارستان : 453)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے۔اسے تراشنے والا حامد بن حماد بن مبارک عسکری ہے،جیسا کہ :

📒حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں:
اَلْمُتَّہِمُ بِوَضْعِہٖ حَامِدُ بْنُ حَمَّادِ الْعَسْکَرِيُّ ۔
’’اس حدیث کو گھڑنے کا الزام حامد بن حماد عسکری کے سر ہے۔‘‘
(تلخیص کتاب الموضوعات،ص:35)

📒حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ نے اسے الموضوعات(157/1) میں ذکر کیا ہے۔

📒حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے ’’موضوع‘‘
(من گھڑت)کہا ہے۔
(میزان الاعتدال : 447/1)

📒حافظ سیوطی(اللآلي المصنوعۃ : 106/1)کا اس جھوٹی روایت کی سند کو ’’حسن‘‘کہنا انتہائی تساہل ہے،

بعض الناس کو چاہیےکہ وہ حامد بن حماد بن مبارک عسکری کی کسی ایک ثقہ امام سے توثیق ثابت کریں،ورنہ تسلیم کریں کہ ان کے حصے میں من گھڑت دلائل آئے ہیں۔

📚دلیل نمبر 2 :
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف ایک منسوب روایت یوں ہے :
’قَالَ اللّٰہُ : وَعِزَّتِي وَجَلالِي، لَا أُعَذِّبُ أَحَدًا سُمِّيَ بِاسْمِکَ بِالنَّارِ، یَا مُحَمَّدُ‘ ۔
’’اللہ تعالیٰ نے فرمایا:اے محمد!مجھے اپنی عزت اور جلال کی قسم!جس کا نام آپ کے نام پر رکھا جائے گا،میں اسے آگ کا عذاب نہیں دوں گا۔‘‘
(معجم الشیوخ للذہبي : 42/3، 43)

🚫تبصرہ : جھوٹی روایت،
📒حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس روایت کو جھوٹی اور باطل قرار دیتے ہوئے کہتے ہیں:
وَنُسْخَۃُ نُبَیْطٍ؛ نُسْخَۃٌ مَّوْضُوعَۃٌ بِلاَ رَیْبٍ، فَلَا تَغْتَرُّوا بِعُلُوِّہَا، فَاللُّکِّيُّ تَکَلَّمَ فِیہِ ابْنُ مَاکُولَا وَغَیْرُہٗ، وَشَیْخُہٗ أَحْمَدُ؛ أَحْسِبُہٗ ہُوَ وَاضِعُ النُّسْخَۃِ ۔
’’نبیط کے نسخہ کے من گھڑت ہونے میں کوئی شبہ نہیں۔اس کے عالی ہونے سے دھوکہ مت کھائو،کیونکہ لُکَّیْ کے بارے میں ابن ماکولا وغیرہ نے جرح کر دی ہے۔میرے خیال کے مطابق اس نسخے کو گھڑنے والا اس کا استاذ احمد ہے۔‘‘
(معجم الشیوخ : 43/3)

📒علامہ،محمد طاہر پٹنی،حنفی نے اسے تذکرۃ الموضوعات(89)میں ذکر کیا ہے۔

📒اسی طرح ابن عراق کنانی نے تنزیہ الشریعۃ المرفوعۃ عن الأخبار الشنیعۃ الموضوعۃ(226/1)میں ذکر کیا ہے۔

📚دلیل نمبر 3 :
سیدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہسے منسوب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
’یُوقَفُ عَبْدَانِ بَیْنَ یَدَيِ اللّٰہِ، فَیَأْمُرُ بِہِمَا إِلَی الْجَنَّۃِ، فَیَقُولَانِ : رَبَّنَا بِمَ اسْتَأْہَلْنَا دُخُولَ الْجَنَّۃِ، وَلَمْ نَعْمَلْ عَمَلًا تُجَازِینَا بِہِ الْجَنَّۃَ ؟ فَیَقُولُ اللّٰہُ : أَدْخِلَا عَبْدَيَّ، فَإِنِّي آلَیْتُ عَلٰی نَفْسِي أَلَّا یَدْخُلَ النَّارَ مَنِ اسْمُہٗ أَحْمَدُ وَمُحَمَّدٌ‘ ۔
’’دو آدمی اللہ تعالیٰ کے سامنے پیش ہوں گے تو اللہ تعالیٰ انہیں جنت میں داخل کرنے کا حکم فرمائے گا۔اس پر وہ دونوں کہیں گے :ہمارے ربّ!ہم جنت میں داخل ہونے کے حق دار کیسے ہوئے،حالانکہ ہم نے ایسا کوئی عمل نہیں کیا،جس کے بدلے میں تُو ہمیں جنت دیتا؟اللہ تعالیٰ فرمائے گا:میرے ان دونوں بندوں کو جنت میں داخل کر دو، کیونکہ میں نے اپنے آپ پر لازم کیا ہے کہ وہ شخص دوزخ میں نہیں جائے گا،جس کا نام محمد یا احمد ہو گا۔‘‘
(فضائل التسمیۃ لابن بکیر : 1)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے،
کیونکہ :
📒حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ کہتے ہیں:
ہٰذَا حَدِیْثٌ لاَّ أَصْلَ لَہٗ ۔
’’اس روایت کی کوئی اصل نہیں۔‘‘
(الموضوعات : 157/1)

📒حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس روایت کو باطل قرار دے کر اس کے راوی احمد بن نصر بن عبداللہ ذارع کے بارے میں کہتے ہیں:
ذَاکَ الْکَذَّابُ ۔
’’یہ جھوٹا شخص ہے۔
‘‘(میزان الاعتدال : 313/2)

اس کے راوی صدقہ بن موسیٰ بن تمیم کے بارے میں

📒 حافظ خطیب بغدادی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
ہٰذَا الشَّیْخُ مَجْہُوْلٌ، وَقَدْ رَوٰی عَنْہُ الذَّارِعُ أَحَادِیْثَ مُنْکَرَۃً، وَالْحَمْلُ فِیْہَا عِنْدِي عَلَی الذَّارِعِ ۔
’’یہ مجہول راوی ہے۔ذارع نے اس سے جھوٹی روایات بیان کر رکھی ہیں۔ میرے نزدیک اس کار روائی کا بوجھ ذارع کے سرپر ہے۔‘‘
(تاریخ بغداد : 333/9)

📒اس کا باپ موسیٰ بن تمیم بن ربیعہ بھی ’’مجہول‘‘ہے۔
حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس روایت کے بارے میں لکھتے ہیں:
سَنَدُہٗ مُظْلِمٌ، وَہُوَ مَوْضُوْعٌ ۔
’’اس کی سند اندھیری ہے جو کہ گھڑی ہوئی ہے۔‘‘
(تلخیص کتاب الموضوعات، ص : 34،ح : 52)

📒شیخ الاسلام ثانی،علامہ ابن قیم الجوزیہ رحمہ اللہ (751-691ھ)لکھتے ہیں:
وَہٰذَا مُنَاقِضٌ، لِمَا ہُوَ مَعْلُومٌ مِّنْ دِینِہٖ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ أَنَّ النَّارَ لاَ یُجَارُ مِنْہَا بِالْـأَسْمَائِ وَالْـأَلْقَابِ، وَإِنَّمَا النَّجَاۃُ مِنْہَا بِالْإِیمَانِ وَالْـأَعْمَالِ الصَّالِحَۃِ ۔
’’یہ واضح طور پر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے لائے ہوئے دین کے خلاف ہے،کیونکہ اسما و القاب نارِ جہنم سے بچا نہیں پائیں گے،بلکہ نجات کا دارو مدار صرف ایمان اور اعمالِ صالحہ پر ہے۔‘
‘(المنار المنیف في الصحیح والضعیف، ص : 57)

📚دلیل نمبر 4 :
حافظ سیوطی من گھڑت روایات کا ذکر کرتے ہوئے اپنی سند سے مرفوعاً ذکر کرتے ہیں:
’إِذَا کَانَ یَوْمَ الْقِیَامَۃِ؛ نَادٰی مُنَادٍ : یَا مُحَمَّدُ، قُمْ، فَادْخُلِ الْجَنَّۃَ بِغَیْرِ حِسَابٍ، فَیَقُومُ کُلُّ مَنِ اسْمُہٗ مُحَمَّدٌ، فَیَتَوَہَّمُ أَنَّ النِّدَائَ لَہٗ، فَلِکَرَامَۃِ مُحَمَّدٍ لَا یُمْنَعُونَ‘ ۔
’’روز ِقیامت ایک منادی یہ پکارے گا:اے محمد!کھڑے ہو جائیں اورجنت میں بغیر حساب داخل ہو جائیں۔اس پر ہر محمد نامی شخص اس توہم میں اٹھ جائے گا کہ اس کا نام بھی محمد ہے۔مگر محمد نام کی برکت کی وجہ سے کسی کو(جنت جانے سے)روکا نہیں جائے گا۔‘‘
(اللآلي المصنوعۃ في الأحادیث الموضوعۃ : 97/1)

🚫تبصرہ:
یہ جھوٹی روایت ہے،کیونکہ :

📒اسے بیان کرنے کے بعد حافظ سیوطی لکھتے ہیں:
ہٰذَا مُعْضَلٌ، سَقَطَ مِنْہُ عِدَّۃُ رِجَالٍ ۔
’’یہ سندمعضل(منقطع)ہے،اس کے کئی ایک راوی گر گئے ہیں۔‘‘
(اللآلي المصنوعۃ في الأحادیث الموضوعۃ : 97/1))

📒اس میں اور کئی خرابیاں بھی ہیں۔
ابن عراق کنانی کہتے ہیں:
قَالَ بَعْضُ أَشَیَاخِي : ہٰذَا حَدِیْثٌ مَّوْضُوْعٌ بِلَا شَکٍّ ۔
’’میرے بعض اساتذہ نے فرمایا : یہ حدیث بلاشک و شبہ موضوع (من گھڑت) ہے۔
‘‘(تنزیہ الشریعۃ المرفوعۃ عن الأخبار الشنیعۃ الموضوعۃ : 226/1)

📚دلیل نمبر 5 :
امیر المومنین،سیدنا علی بن ابو طالب رضی اللہ عنہ سے یہ قول منسوب ہے :
إِذَا سَمَّیْتُمُ الْوَلَدَ مُحَمَّدًا؛ فَأَکْرِمُوہُ وَأَوْسِعُوا لَہُ الْمَجْلِسَ، وَلَا تُقَبِّحُوا لَہٗ وَجْہًا ۔
’’جب تم کسی بچے کا نام محمد رکھو تو اس کی عزت کرو،اس کے لیے مجلس کشادہ رکھو اور اس کے چہرے کے عیوب بیان نہ کرو۔‘‘(فضائل التسمیۃ لابن بکیر : 26)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے، کیونکہ :

📒حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے اسے ’’منکر المتن‘‘قرار دیا ہے۔
(سیر أعلام النبلاء : 386/9)

📒نیز فرماتے ہیں:
عَبْدُ اللّٰہِ بْنُ أَحْمَدَ بْنِ عَامِرٍ، عَنْ أَبِیْہِ، عَنْ عَلِيٍّ الرَّضَا، عَنْ آبَائِہٖ، بِتِلْکَ النُّسْخَۃِ الْمَوْضُوْعَۃِ الْبَاطِلَۃِ، مَا تَنْفَکُّ عَنْ وَّضْعِہٖ أَوْ وَضْعِ أَبِیْہِ ۔
’’عبداللہ بن احمد بن عامر، اپنے باپ،علی رضا اور ان کے آباو اجداد سے یہ من گھڑت اور جھوٹا نسخہ بیان کرتا ہے،جو یا تو اس کی اپنی گھڑنتل ہے یا اس کے باپ کی۔‘‘
(میزان الاعتدال : 390/2)

📒عبداللہ بن احمد بن عامر کے بارے میں حسن بن علی زہری کہتے ہیں:
کَانَ أُمِّیًّا، لَمْ یَکُنْ بِالْمَرْضِيِّ ۔
’’وہ ایک جاہل اور غیر معتبر شخص تھا۔‘‘
(سؤالات السہمي للدارقطني : 339،)
( تاریخ بغداد للخطیب : 394/9)

📒اس روایت کی ایک سند تاریخ بغداد(90/3) میں آتی ہے،لیکن یہ سند بھی جھوٹی ہے،کیونکہ اسے بیان کرنے والے ابواسماعیل علی بن حسین،حسین بن حسن محمد بن قاسم اور اس کے باپ سمیت سب کی توثیق درکار ہے۔

📒اس کی تیسری سند مسندبزار(کشف الأستار : 413/2،ح : 1988)
میں بھی آتی ہے۔لیکن یہ بھی سخت ترین ’’ضعیف‘‘ہے،کیونکہ اس کے راوی غسان بن عبیداللہ راسبی کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہو سکا۔
نیز یوسف بن نافع بن عبداللہ بن نافع راوی ــ’’مجہول الحال‘‘ ہے۔سوائے امام ابن حبان رحمہ اللہ (الثقات : 281/9)کے کسی نے اسے ’’ثقہ‘‘ نہیں کہا۔

📚دلیل نمبر 6 :
سیدنا جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنھما سے منسوب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلمنے فرمایا:
’إِذَا سَمَّیْتُمُوْہُ مُحَمَّدًا؛ فَلاَ تُجَبِّہُوْہُ، وَلاَ تُحَرِّمُوْہُ، وَلَا تُقَبِّحُوْہُ، بُوْرِکَ فِي مُحَمَّدٍ، وَفِي بَیْتٍ فِیْہِ مُحَمَّدٌ، وَمَجْلِسٌ فِیْہِ مُحَمَّدٌ‘ ۔
’’جب تم بچے کا نام محمد رکھو،تو نہ اس کے ساتھ سختی کرو،نہ اس کی تنقیص کرو اور نہ اس کی برائی بیان کرو۔نیز محمد نام ،جس گھر میں محمد نامی بچہ ہو اور جس مجلس میں محمد نامی شخص ہو، اس میں برکت ہو گی۔‘‘
(سلسلۃ الأحادیث الضعیفۃ والموضوعۃ وأثرھا السيّء في الأمّۃ للألباني : 2574)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے، کیونکہ :

1سفیان بن وکیع راوی جمہور محدثین کرام کے نزدیک ’’ضعیف‘‘ہے۔
2سفیان بن ہارون قاضی کی توثیق درکار ہے۔
3ابو الزبیر ’’مدلس‘‘ہیں اور ان کے سماع کی تصریح نہیں مل سکی،

📚دلیل نمبر 7 :
سیدنا علی بن ابو طالب رضی اللہ عنہ سے منسوب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
’مَا اجْتَمَعَ قَوْمٌ فِي مَشُورَۃٍ مَّعَہُمْ رَجُلٌ، اسْمُہٗ مُحَمَّدٌ، وَلَمْ یُدْخِلُوہُ فِي مَشُورَتِہِمْ؛ إِلَّا لَمْ یُبَارَکْ لَہُمْ فِیہَا‘ ۔
’’جو قوم مشورے کے لیے جمع ہوتی ہے اور ان میں کوئی محمد نامی شخص ہو اور وہ اسے مشورے میں شریک نہ کریں تو اس مشورے میں برکت نہیں ہو گی۔‘‘
(فضائل التسمیۃ لابن بکیر : 9، موضح أوہام الجمع والتفریق للخطیب البغدادي : 446/1)

🚫تبصرہ :
یہ سخت ترین ’’ضعیف‘‘ سند ہے،کیونکہ احمد بن حفص جزری کون ہے؟معلوم نہیں۔
ایک سند میں احمدالشامی کے نام سے مذکور ہے۔اس کے بارے میں :

📒امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
مُنْکَرُ الْحَدِیِثِ، وَ لَیْسَ بِالْمَعْرُوْفِ ۔
’’یہ منکر الحدیث اور غیر معروف شخص ہے۔
‘‘(الکامل في ضعفاء الرجال : 141/1)

📒دیلمی کی سند میں احمد بن جعفر حرانی کا ذکر ہے۔
(اللآّلي المصنوعۃ للسیوطي : 96/1)
میں بھی ’’مجہول‘‘راوی موجود ہے۔

📒تاریخ ابن النجار میں بھی اس بارے میں ایک موضوع سند مذکور ہے۔اس کے راوی ابوبکر محمد بن احمد بن محمد حفید کے بارے میں :
حافظ ذہبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
وَہُوَ مُتَّہَمٌ ۔
’’اس راوی کو روایت ِحدیث میں مورد ِالزام ٹھہرایا گیا ہے۔‘‘
(میزان الاعتدال : 461/3)

نیز فرماتے ہیں:
لَیْسَ بِثِقَۃٍ ۔
’’یہ ثقہ نہیں ہے۔‘‘
(سیر أعلام النبلاء : 389/9)

📒اسے حافظ سیوطی نے بھی ’’متہم‘‘کہا ہے۔(اللآّلي المصنوعۃ : 96/1)
فضائل التسمیۃ بأحمد و محمّد لابن بکیر(4)میں بھی اس کا ایک ’’موضوع‘‘
(من گھڑت) شاہد آتا ہے۔
عبداللہ بن احمد بن عامر طائی اور اس کے باپ احمد بن عامر طائی دونوں کا حال بیان ہو چکا ہے۔یہ روایت انہی دونوں کی کار روائی ہے،
یوں یہ روایت ناقابل اعتبار ہوئی۔یہی وجہ ہے کہ

📒 اسے امام ابن عدی رحمہ اللہ نے ’’غیر محفوظ‘‘کہا ہے۔
(الکامل في ضعفاء الرجال : 140/1)

📚دلیل نمبر 8 :
محمد بن عثمان عمری اپنے والد سے مرفوعاً بیان کرتے ہیں:
’مَا ضَرَّ أَحَدَکُمْ لَوْ کَانَ فِي بَیْتِہٖ مُحَمَّدٌ وَمُحَمَّدَانِ وَثَلَاثَۃٌ‘ ۔
’’اگر تم میں سے کسی ایک کے گھر میں ایک، دو یا تین محمد نامی شخص ہوں گے تو تمہیں کوئی نقصان نہیں پہنچے گا۔‘‘(الطبقات الکبرٰی لابن سعد : 54/5)

🚫تبصرہ :
یہ روایت ’’مرسل‘‘ ہونے کی وجہ سے ’’ضعیف‘‘ہے،کیونکہ عثمان عمری صحابی نہیں،لیکن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے بغیر کسی واسطے کے بیان کر رہا ہے۔

📚دلیل نمبر 9 :
سیدنا جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنھما سے منسوب ہے کہ رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلمنے فرمایا:
’مَا أُطْعِمَ طَعَامٌ عَلٰی مَائِدَۃٍ، ولاَ جُلِسَ عَلَیْہَا، وَفِیہَا اسْمِي؛ إِلاَّ قُدِّسُوا کُلَّ یَوْمٍ مَّرَّتَیْنِ‘ ۔
’’جس بھی دستر خوان پر کھانا کھایا جائے اور جس بھی مجلس میں بیٹھا جائے،اگر اس میں میرا نام ہو، تو ہر دن انہیں دو مرتبہ پاک کیا جائے گا۔‘‘
(الکامل في ضعفاء الرجال لابن عدي : 275/1،)
( موضح أوہام الجمع والتفریق للخطیب : 447/1،)
( العلل المتناہیۃ لابن الجوزي : 267)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے۔اسے ذکر کرنے کے بعد امام ابن عدی رحمہ اللہ نے ’’غیر محفوظ‘‘ قرار دیاہے،کیونکہ :

📒1_اس کے راوی احمد بن کنانہ شامی کے بارے میں امام صاحب فرماتے ہیں:
مُنْکَرُ الْحَدِیِثِ، وَ لَیْسَ بِالْمَعْرُوْفِ ۔
’’یہ منکر الحدیث اور غیر معروف شخص ہے ۔‘‘(الکامل : 274/1)

📒2_اس روایت کی صحت کے لیے امام ابن عدی رحمہ اللہ کے استاذ یحییٰ بن عبدالرحمن بن ناجیہ حرانی کی توثیق بھی درکار ہے۔

📚دلیل نمبر 10:
سیدنا جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنھما ہی سے منسوب ایک مرفوع روایت ہے :
’لَیْسَ أَحَدٌ مِّنْ أَہْلِ الْجَنَّۃِ؛ إِلاَّ یُدْعٰی بِاسْمِہٖ، إِلَّا آدَمَ‘ ۔
’’سیدنا آدم علیہ السلام کے علاوہ ہر جنتی کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے نام سے پکارا جائے گا۔‘‘
(المجروحین لابن حبّان : 76/3، تاریخ بغداد للخطیب : 463/3)

🚫تبصرہ :
یہ بھی جھوٹی روایت ہے،کیونکہ :

اس کو گھڑنے کا کارنامہ وہب بن حفص حرانی نے سرانجام دیا ہے ۔اس کے بارے میں :

📒ابو عروبہ رحمہ اللہ کہتے ہیں:
کَذَّابٌ، یَضَعُ الْحَدِیْثَ ۔
’’یہ جھوٹا تھا اور اپنی طرف سے احادیث گھڑا کرتا تھا۔‘‘
(الکامل في ضعفاء الرجال لابن عدي : 344/8)

📒امام ابن عدی رحمہ اللہ اس کے بارے میں فرماتے ہیں:
وَکُلُّ أَحَادِیْثِہٖ مَنَاکِیْرُ، غَیْرُ مَحْفُوْظَۃٍ ۔
’’اس کی ساری کی ساری روایات جھوٹی اور غیر محفوظ ہیں۔‘‘
(الکامل في ضعفاء الرجال : 347/8)

📒اس کے بارے میں امام دارقطنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
یَضَعُ الْحَدِیْثَ ۔
’’یہ اپنی طرف سے احادیث گھڑا کرتا تھا۔‘
‘(تاریخ بغداد للخطیب : 463/13)

📒اس روایت کو حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ نے الموضوعات (257/3)میں ذکر کیا ہے۔

📒الکامل لابن عدي(74/5)میں اس کی ایک دوسری سند بھی ہے،مگر یہ بھی جھوٹی سند ہے، کیونکہ اس کاراوی شیخ بن خالد صوفی بصری جھوٹی احادیث گھڑنے والا تھا۔

📒امام ابن عدی رحمہ اللہ خود فرماتے ہیں:
وَشَیْخُ ابْنُ أَبِي خَالِدٍ ہٰذَا؛ لَیْسَ بِمَعْرُوْفٍ، وَہٰذِہِ الْـأَحَادِیْثُ الَّتِي رَوَاہَا عَنْ حَمَّادٍ بِہٰذَا الْإِسْنَادِ؛ بَوَاطِیْلُ کُلُّہَا ۔
’’ابن ابی خالد کا استاذ غیر معروف ہے۔حماد کے حوالے سے بیان کی جانے والی اس کی یہ ساری روایات جھوٹی ہیں۔‘‘
(الکامل لابن عدي(74/5))

📒امام ابن حبان رحمہ اللہ اس روایت کو باطل اور ’’موضوع‘‘(جھوٹی)قرار دیتے ہوئے کہتے ہیں:
لَا یَجُوْزُ الِْاحْتِجَاجُ بِہٖ (شَیْخِ ابْنِ أَبِي خَالِدٍ) بِحَالٍ ۔
’’کسی بھی حالت میں ابن ابی خالد کے استاذ کی روایت سے دلیل لینا جائز نہیں۔‘‘
(المجروحین : 364/1)
اس روایت میں اور بھی خرابیاں ہیں۔ل،

📚دلیل نمبر 11-
امیرالمومنین،سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے منسوب ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
’أَہْلُ الْجَنَّۃِ؛ لَیْسَتْ لَہُمْ کُنًی إِلاَّ آدَمُ، فَإِنَّہٗ یُکَنّٰی بِأَبِي مُحَمَّدٍ تَوْقِیرًا وَّتَعْظِیمًا‘ ۔
’’سیدنا آدم کے علاوہ کسی جنتی کی کوئی کنیت نہیں ہو گی۔آدم کی کنیت بطور تعظیم و تکریم ابو محمد ہو گی۔‘‘
(الکامل في ضعفاء الرجال لابن عدي : 566/7، الموضوعات لابن الجوزي : 258/3)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے،کیونکہ اس کے راوی ابوالحسن محمد بن محمد بن الاشعث کوفی نے خود اسے گھڑ کر نبی اکرمصلی اللہ علیہ وسلم کی طرف منسوب کیا ہے، جیسا کہ امام ابن عدی رحمہ اللہ نے فرمایا ہے۔
📒اس راوی کے بارے میں امام دارقطنی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
آیَۃٌ مِّنْ آیَاتِ اللّٰہِ ذٰلِکَ الْکِتَابُ، ہُوَ وَضَعَہٗ، أَعْنِي الْعَلَوِیَاتِ ۔
’’یہ علویات نامی کتاب اللہ تعالیٰ کی نشانیوں میں سے ایک نشانی ہے۔اسے اسی (ابو الحسن کوفی)نے گھڑا ہے۔‘
‘(سؤالات السہمي للدارقطني : 52)

📚دلیل نمبر 12 :
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف یہ حدیث بھی منسوب ہے :
’مَنْ کَانَ لَہٗ ذُو بَطْنٍ، فَأَجْمَعَ أَنْ یُّسَمِّیَہٗ مُحَمَّدًا؛ رَزَقَہُ اللّٰہُ غُلَامًا، وَمَا کَانَ اسْمُ مُحَمَّدٍ فِي بَیْتٍ؛ إِلَّا جَعَلَ اللّٰہُ فِي ذٰلِکَ الْبَیْتِ بَرَکَۃً‘ ۔
’’جو اپنے پیٹ والے بچے کا نام محمد رکھنے کا ارادہ کرے،تو اللہ تعالیٰ اسے بیٹا ہی عطا فرمائے گا اور جس گھر میں محمد نامی شخص ہو،اللہ تعالیٰ اس گھر میں برکت ڈالتا ہے۔‘‘(فضائل التسمیۃ بأحمد ومحمّد لابن بکیر : 11)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی سند ہے،کیونکہ :
1-محمد بن عبدالرحمن جدعانی راوی جمہور کے نزدیک ’’ضعیف‘‘ہے۔
2-ابن جریج کی ’’تدلیس‘‘ بھی موجود ہے۔
3-ابن جریج سے اوپر سند غائب ہے۔
4-اس میں اور بھی کئی خرابیاں ہیں۔

📚دلیل نمبر 13 :
سیدنا علی بن ابو طالب رضی اللہ عنہ کی طرف یہ قول منسوب ہے :
مَنْ کَانَ لَہٗ حَمْلٌ، فَنَوٰی أَنْ یُّسَمِّیَہٗ مُحَمَّدًا؛ حَوَّلَہُ اللّٰہُ ذَکَرًا، وَإِنْ کَانَ أُنْثٰی ۔
’’جس کا کوئی حمل ہو اور وہ اس کے لیے محمد نام کی نیت کرے ،تو اللہ تعالیٰ اسے بیٹے میں بدل دے گا،اگرچہ وہ بیٹی ہی کیوں نہ ہو۔‘‘
(اللآّلي المصنوعۃ في الأحادیث الموضوعۃ للسیوطي : 95/1)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹی روایت ہے، کیونکہ :

📒1-وہب بن وہب راوی کو محدثین کرام نے کذاب،دجال،اللہ کا دشمن اور اپنی طرف سے حدیثیں گھڑ کر رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف منسوب کرنے والا قرار دیا ہے۔
(میزان الاعتدال للذہبي : 353/4)

📒2-زید بن مروان تک اس سند کی تحقیق درکار ہے،

📚دلیل نمبر -14
ہشام بن عروہ تابعی رحمہ اللہ کی طرف منسوب ہے :
دَخَلْتُ عَلَی الْمَنْصُورِ أَمِیرِ الْمُؤْمِنِینَ، فَقَالَ : کَمْ وَلَدًا لَّکَ یَا ہِشَامُ؟ قُلْتُ : مُحَمَّدٌ، وَفُلَانٌ، وَفُلَانٌ، فَقَالَ لِي : کَیْفَ سَمَّیْتَ وَلَدَکَ مُحَمَّدًا، وَتَرَکْتَ الزُّبَیْرَ وَعُرْوَۃَ ؟ قُلْتُ : تَبَرُّکًا بِاسْمِ النَّبِيِّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، فَقَالَ : ائْتِ بِمَوْضِعِ الْبَرَکَۃِ وَالتَّکْرِیمِ، قَالَ : حَدَّثَنِي أَبِي مُحَمَّدُ بْنُ عَلِيٍّ، قَالَ : سَمِعْتُ أَبِي عَلِیًّا، یَقُولُ : سَمِعْتُ أَبِي عَبْدَ اللّٰہِ بْنَ عَبَّاسٍ یَقُولُ : مَنْ کَانَ لَہٗ حَمْلٌ، فَنَوٰی أَنْ یُّسَمِّیَہٗ مُحَمَّدًا؛ أُدْخِلَ إِنْ شَاء َ اللّٰہُ الْجَنَّۃَ ۔
’’میں امیر المومنین منصور کے پاس آیا،انہوں نے دریافت کیا:ہشام! آپ کے کتنے بچے ہیں؟ میں نے کہا : محمد اور فلاں،فلاں۔انہوں نے کہا:آپ نے زبیر اور عروہ چھوڑ کر محمد نام کیوں رکھا؟میں نے کہا: نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلمکے نام کی برکت کی وجہ سے۔انہوں نے دریافت کیا: اس برکت و تعظیم کی کیا دلیل ہے؟میں نے کہا : مجھے میرے والد محمد بن علی نے بیان کیا کہ انہوں نے سیدنا علی رضی اللہ عنہ کو یہ کہتے ہوئے سنا کہ انہوں نے سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنھما کو یہ فرماتے ہوئے سنا:جس کا کوئی حمل ہو اور وہ اس کے لیے محمد نام کی نیت کرے، تو ان شاء اللہ وہ جنت میں داخل کیا جائے گا۔‘‘
(فضائل التسمیۃ لابن بکیر : 13)

🚫تبصرہ :
یہ جھوٹا قول ہے،
کیونکہ سیدنا عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنھما تک سند کا صحیح ہونا ثابت نہیں۔اس سند میں نصر بن ابو الفتح خراسانی اور محمد بن عبداللہ بن رزیق دونوں نامعلوم اور ’’مجہول‘‘ہیں،

📚دلیل نمبر 15 :
عطا خراسانی رحمہ اللہ سے منسوب ہے :
مَا سُمِّيَ مَوْلُوْدٌ فِي بَطْنِ أُمِہٖ مُحَمَّدًا؛ إِلاَّ أَذْکَرَ ۔
’’جس بچے کا نام اس کی ماں کے پیٹ میں محمد رکھا گیا وہ بیٹا ہی ہو گا۔‘‘
(الأجوبۃ المرضیّۃ للحافظ السخاوي : 381/1، 989/3)

🚫تبصرہ :
یہ قول بے سند ہونے کی وجہ سے مردود ہے،

📚دلیل نمبر-16
امام مالک رحمہ اللہ کا قول نقل کیا جاتا ہے کہ ’’جس گھر میں محمد نام کا شخص ہو،اس میں پھیل جاتا ہے۔‘‘
🚫تبصرہ
بے سند ہونے کی وجہ سے ناقابل التفات ہے،

📚دلیل نمبر 17 :
وہب بن وہب کہتا ہے:
’’میں نے اپنے سات بچوں کا نام دورانِ حمل ہی محمد رکھنے کی نیت کر لی تھی،جس کی برکت سے سب لڑکے پیدا ہوئے۔‘‘
(اللّآلي المصنوعۃ في الأحادیث الموضوعۃ للسیوطي : 95/1)

🚫تبصرہ :
وہب بن وہب خود بہت بڑا جھوٹا ہے، اس کی بات کا اعتبار کوئی اس جیسا ہی کر سکتا ہے،

__________&_________

*محمد نام کی فضیلت کے بارے اہل علم کے اقوال*

محمد نام کی فضیلت اور فوائد و برکات کے متعلق جتنی بھی احادیث وارد ہوئی ہیں،وہ ساری کی ساری جھوٹی ہیں،

📚جیسا کہ :
حافظ ابن الجوزی رحمہ اللہ کہتے ہیں:
وَقَدْ رُوِيَ فِي ہٰذَا الْبَابِ أَحَادِیْثُ، لَیْسَ فِیْھَا مَا یَصِحُّ ۔
’’اس باب میں بیان کی جانے والی کوئی روایت صحیح نہیں۔‘‘
(الموضوعات : 158/1)

📚حافظ ذہبی رحمہ اللہ کہتے ہیں:
وَہٰذِہٖ أَحَادِیْثُ مَکْذُوْبَۃٌ ۔
’’یہ ساری روایتیں جھوٹی ہیں۔
‘‘(میزان الاعتدال في نقد الرجال : 129/1)

📚حافظ ابن قیم الجوزیہ رحمہ اللہ کہتے ہیں:
وَفِي ذٰلِکَ جُزْئٌ، کُلُّہٗ کَذِبٌ ۔
’’اس بارے میں پورا ایک کتابچہ ہے جو کہ سارا جھوٹ کا پلندہ ہے۔‘‘
(المنار المنیف في الصحیح والضعیف، ص : 52)

📚علامہ حلبی کہتے ہیں:
قَالَ بَعْضُہُمْ : وَلَمْ یَصِحَّ فِي فَضْلِ التَّسْمِیَۃِ بِمُحَمَّدٍ حَدِیْثٌ، وَکُلُّ مَا وَرَدَ فِیْہِ؛ فَہُوَ مَوْضُوْعٌ ۔
’’بعض علما کا کہنا ہے کہ محمد نام کی فضیلت میں کوئی حدیث صحیح نہیں،بلکہ اس بارے میں بیان کی جانے والی ساری روایات من گھڑت ہیں۔‘‘
(إنسان العیون في سیرۃ الأمین المأمون، المعروف بہ السیرۃ الحلبیّۃ : 121/1)

📚علامہ زرقانی لکھتے ہیں:
وَذَکَرَ بَعْضُ الْحُفَّاظِ أَنَّہٗ لَمْ یَصِحَّ فِي فَضْلِ التَّسْمِیَۃِ بِمُحَمَّدٍ حَدِیْثٌ ۔
’’بعض حفاظ کا کہنا ہے کہ محمد نام کی فضیلت میں کوئی حدیث صحیح نہیں۔‘‘
(شرح الزرقاني علی المواہب اللدنیۃ : 307/7)

📚ابن عراق کنانی لکھتے ہیں:
قَالَ الْـأُبِّيُّ : لَمْ یَصِحَّ فِي فَضْلِ التَّسْمِیَۃِ بِمُحَمَّدٍ حَدِیْثٌ، بَلْ قَالَ الْحَافِظُ أَبُو الْعَبَّاسِ تَقِيُّ الدَّیْنِ الْحِرَّانِيُّ : کُلُّ مَا وَرَدَ فِیْہِ؛ فَہُوَ مَوْضُوْعٌ ۔
’’علامہ اُبّی کہتے ہیں کہ محمد نام کی فضیلت میں کوئی حدیث ثابت نہیں،بلکہ حافظ ابن تیمیہ رحمہ اللہ کے بقول اس بارے میں بیان کی جانے والی ساری کی ساری روایات من گھڑت ہیں۔‘‘
(تنزیہ الشریعۃ المرفوعۃ عن الأخبار الشنیعۃ الموضوعۃ : 174/1)

*خلاصہ یہ ہے کہ محمد ایک پیارا نام ہے اور اس نام کی نسبت یقیناً سب سے اعلیٰ و افضل نبی کی طرف ہے، مگر اسم محمد سے حصولِ تبرک یا اس نام کی فضیلت میں پیش کی جانے والی تمام دلیلیں جھوٹ پر مبنی ہیں،اس بارے میں کوئی ٹھوس اور صحیح دلیل دستیاب نہیں*

________&_________

(واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب)

📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!

⁦ سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے۔ 📑
کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں

یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ نمبر
+923036501765

آفیشل ویب سائٹ
http://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں