746

سوال_ نکاح متعہ کسے کہتے ہیں؟ اور نکاح متعہ کی شرعی حیثیت کیا ہے؟ کیا موجودہ وقت میں نکاح متعہ جائز ہے؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-235”
سوال_ نکاح متعہ کسے کہتے ہیں؟ اور نکاح متعہ کی شرعی حیثیت کیا ہے؟ کیا موجودہ وقت میں نکاح متعہ جائز ہے؟

Published Date: 19-4-2019

جواب:
الحمدللہ:

*نکاح متعہ*

متعہ – یا مؤقت شادی – یہ ہے کہ کوئی شخص کسی عورت سے کچھ معین وقت کے لیے کسی چیز یا کچھ مال کے عوض شادی کر لے،

*شروع شروع میں جس طرح شراب جائز تھی، گدھے کا گوشت حلال تھا اسی طرح نکاح متعہ کی بھی ضرورت کے حساب سے اجازت دی گئی تھی،مگر بعد میں صاحب شریعت حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنی زبان مبارکہ سے ہی اسکو قیامت تک کے لیے حرام قرار دے دیا تھا*

دلائل درج ذیل ہیں

*نکاحِ متعہ اور قرآن و حدیث سے دلائل*

📚فرمانِ باری تعالیٰ ہے :
{وَالَّذِیْنَ ھمْ لِفُرُوْجِہِمْ حَافِظُوْنَ ٭ اِلَّا عَلٰٓی أَزْوَاجِہِمْ اَوْ مَا مَلَکَتْ اَیْمَانُہُمْ فَاِنَّہُمْ غَیْرُ مَلُوْمِیْنَ ٭ فَمَنِ ابْتَغٰی وَرَآئَ ذٰلِکَ فَاُولٰٓئِکَ ہُمُ الْعَادُوْنَ ٭}
(سورہ المؤمنون ،آئیت،5,6,7)
ترجمہ:
’’اور وہ لوگ (مؤمن ہیں)،جو اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرتے ہیں، سوائے اپنی بیویوں اور اپنی لونڈیوں کے۔ایسے لوگ ملامت نہیں کیے جائیں گے۔لیکن جو لوگ اس کے علاوہ کچھ تلاش کریں،وہ زیادتی کے مرتکب ہیں۔‘‘

*معلوم ہوا کہ بیوی اور لونڈی کے علاوہ کسی سے جنسی تعلق رکھنا جائز نہیں، جس عورت سے متعہ کیا جاتا ہے، وہ مرد کی نہ بیوی ہوتی ہے نہ لونڈی،لہٰذا متعہ حرام ہے*

📚ام المومنین،سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے ابن ابو ملیکہ رحمہ اللہ نے متعہ کے بارے میں پوچھا، تو انہوں نے ارشاد فرمایا :
بَیْنِي وَبَیْنَکُمْ کِتَابُ اللّٰہِ، قَالَ : وَقَرَأَتْ ہٰذِہِ الْـآیَۃَ :
{وَالَّذِیْنَ ہُمْ لِفُرُوْجِہِمْ حَافِظُوْنَ ٭} ۔۔۔۔
’’میرے اور تمہارے مابین اللہ کی کتاب سے فیصلہ ہو گا۔انہوں نے یہ آیت ِکریمہ تلاوت فرمائی :
{وَالَّذِیْنَ ہُمْ لِفُرُوْجِہِمْ حَافِظُوْنَ ٭}
([مؤمن وہ ہیں،]جو اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرتے ہیں)۔
(الناسخ والمنسوخ للقاسم بن سلّام : 131،)
( مسند الحارث [بغیۃ الباحث] : 479،)
( السنن الکبرٰی للبیہقي : 206/7، 207، وسندہٗ صحیحٌ)

📚امام حاکم رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
ہٰذَا حَدِیثٌ صَحِیحٌ عَلٰی شَرْطِ الشَّیْخَیْنِ ۔
’’یہ حدیث امام بخاری و مسلم کی شرط پر صحیح ہے۔‘‘المستدرک : 305/2، 393)
حافظ ذہبی رحمہ اللہ نے اس سلسلے میں ان کی موافقت کی ہے۔

📚 عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہو کر جہاد کیا کرتے تھے اور ہمارے ساتھ ہماری بیویاں نہیں ہوتی تھیں۔ اس پر ہم نے عرض کیا کہ ہم اپنے آپ کو خصی کیوں نہ کر لیں۔ لیکن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس سے روک دیا اور اس کے بعد ہمیں اس کی اجازت دی کہ ہم کسی عورت سے کپڑے ( یا کسی بھی چیز ) کے بدلے میں نکاح( متعہ )کر سکتے ہیں۔
(صحیح بخاری،حدیث نمبر-4615،5075)

📚سبرہ بن معبد جہنی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ حجۃ الوداع میں نکلے، تو لوگوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! عورت کے بغیر رہنا ہمیں گراں گزر رہا ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ان عورتوں سے متعہ کر لو ، ہم ان عورتوں کے پاس گئے وہ نہیں مانیں، اور کہنے لگیں کہ ہم سے ایک معین مدت تک کے لیے نکاح کرو، لوگوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کا ذکر کیا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اپنے اور ان کے درمیان ایک مدت مقرر کر لو چنانچہ میں اور میرا ایک چچا زاد بھائی دونوں چلے، اس کے پاس ایک چادر تھی، اور میرے پاس بھی ایک چادر تھی، لیکن اس کی چادر میری چادر سے اچھی تھی، اور میں اس کی نسبت زیادہ جوان تھا، پھر ہم دونوں ایک عورت کے پاس آئے تو اس نے کہا: چادر تو چادر کی ہی طرح ہے ( پھر وہ میری طرف مائل ہو گئی ) چنانچہ میں نے اس سے نکاح ( متعہ ) کر لیا، اور اس رات اسی کے پاس رہا، صبح کو میں آیا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم رکن ( حجر اسود ) اور باب کعبہ کے درمیان کھڑے فرما رہے تھے:
اے لوگو! میں نے تم کو متعہ کی اجازت دی تھی لیکن سن لو!
اللہ نے اس کو قیامت تک کے لیے حرام قرار دے دیا ہے، اب جس کے پاس متعہ والی عورتوں میں سے کوئی عورت ہو تو اس کو چھوڑ دے، اور جو کچھ اس کو دے چکا ہے اسے واپس نہ لے،
(سنن ابن ماجہ حدیث نمبر-1962)
(سنن نسائی حدیث نمبر-3368)

📚سبرہ جہنی نے حدیث سنائی کہ ان کے والد نے انہیں حدیث بیان کی کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ تھے ، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : لوگو! بےشک میں نے تمہیں عورتوں سے متعہ کرنے کی اجازت دی تھی ، اور بلاشبہ اب اللہ تعالیٰ نے اسے قیامت کے دن تک کے لیے حرام کر دیا ہے ، اس لیے جس کسی کے پاس ان عورتوں میں سے کوئی ( عورت موجود ) ہو تو وہ اس کا راستہ چھوڑ دے ، اور جو کچھ تم لوگوں نے انہیں دیا ہے اس میں سے کوئی چیز ( واپس ) مت لو۔
(صحیح مسلم، کتاب النکاح، باب متعہ حدیث نمبر-1406)

📚حضرت علی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ،نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے خیبر کی فتح کے وقت عورتوں سے متعہ کرنے سے اور گھریلو گدھوں کے گوشت کھانے سے منع فرمایا
(صحیح بخاری حدیث نمبر-4216،5115)

📚سنن ترمذی میں حضرت علی رض کی اسی حدیث کے نیچے امام ترمذی کہتے ہیں:
۱- علی رضی الله عنہ کی حدیث حسن صحیح ہے، ۲- اس باب میں سبرہ جہنی اور ابوہریرہ رضی الله عنہ سے بھی احادیث آئی ہیں، ۳- صحابہ کرام وغیرہم میں سے اہل علم کا اسی پر عمل ہے، البتہ ابن عباس سے کسی قدر متعہ کی اجازت بھی روایت کی گئی ہے، پھر انہوں نے اس سے رجوع کر لیا جب انہیں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں اس کی خبر دی گئی۔ اکثر اہل علم کا معاملہ متعہ کی حرمت کا ہے، یہی ثوری، ابن مبارک، شافعی، احمد اور اسحاق بن راہویہ کا بھی قول ہے۔
(سنن ترمذی حدیث نمبر-1121)

📚ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم نکلے تو ثنیۃ الوداع میں پڑاؤ کیا۔ (وہاں) تو چراغ دیکھے، اور کچھ عورتوں کے رونے کی آواز سنی، آپ نے پوچھا: یہ کیا ہے؟ صحابہ نے کہا: اے اللہ کے رسول! یہ وہ عورتیں ہیں جن سے ان کے شوہروں نے متعہ کیا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ختم ہے، یا فرمایا: نکاح، طلاق، عدت اور وراثت نے متع کو حرام کردیا ہے۔
(سلسلہ الصحیحہ،حدیث نمبر-2402)
(صحیح ابن حبان حدیث نمبر-4223)

📚ابن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ جب عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ خلیفہ ہوئے، تو انہوں نے خطبہ دیا اور کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہم لوگوں کو تین بار متعہ کی اجازت دی پھر اسے حرام قرار دیا، قسم ہے اللہ کی اگر میں کسی کے بارے میں جانوں گا کہ وہ شادی شدہ ہوتے ہوئے متعہ کرتا ہے تو میں اسے پتھروں سے رجم کر دوں گا، مگر یہ کہ وہ چار گواہ لائے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے (متعہ کو) حرام قرار دینے کے بعد حلال کیا تھا۔
(سنن ابن ماجہ،حدیث نمبر-1963)

📚علی رضی اللہ عنہ سے کہا گیا کہ عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما عورتوں کے متعہ میں کوئی حرج نہیں سمجھتے، تو انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خیبر کی لڑائی کے موقع پر متعہ سے اور پالتو گدھوں کے گوشت سے منع کر دیا تھا،
(صحیح بخاری حدیث نمبر-6961)

📚’’ایک آدمی نے سیدنا عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے متعہ کے بارے میں پوچھا، تو انہوں نے فرمایا : یہ حرام ہے۔اس نے کہا : فلاں شخص اس کے جواز کا قائل ہے، تو فرمایا : اللہ کی قسم ! یہ بات معلوم ہو چکی ہے کہ غزوۂ خیبر کے دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے حرام قرار دے دیا تھا۔ ہم زناکار نہیں۔‘
‘(المؤطّأ لابن وہب : 249، )
(صحیح أبي عوانۃ : 29/3،)
( شرح معاني الآثار للطحاوي : 25/3،) (السنن الکبرٰی للبیہقي : 207/7، وسندہٗ صحیحٌ)

__________&___________

*نکاحِ متعہ اور اجماعِ امت*

امت ِمسلمہ کا اس بات پر اجماع ہے کہ شریعت ِاسلامیہ میں نکاحِ متعہ تاقیامت حرام ہو چکا ہے، جیسا کہ :

📚امام ابو عُبَیْد،قاسم بن سلام رحمہ اللہ (224-150ھ)فرماتے ہیں :
فَالْمُسْلِمُونَ الْیَوْمَ مُجْمِعُونَ عَلٰی ہٰذَا الْقَوْلِ : إِنَّ مُتْعَۃَ النِّسَائِ قَدْ نُسِخَتْ بِالتَّحْرِیمِ، ثُمَّ نَسَخَہَا الْکِتَابُ وَالسُّنَّۃُ ۔۔۔، وَلَا نَعْلَمُ أَحَدًا مِّنَ الصَّحَابَۃِ کَانَ یَتَرَخَّصُ فِیہَا، إِلَّا مَا کَانَ مِنَ ابْنِ عَبَّاسٍ، فَإِنَّہٗ کَانَ ذٰلِکَ مَعْرُوفًا مِّنْ رَّأْیِہٖ، ثُمَّ بَلَغَنَا أَنَّہٗ رَجَعَ عَنْہُ ۔
’’آج مسلمانوں کا اس بات پر اجماع ہے کہ عورتوں سے نکاحِ متعہ کو منسوخ کر کے حرام کر دیا گیا ہے۔کتاب و سنت نے اسے منسوخ کیا ہے۔کوئی ایک بھی ایسے صحابی معلوم نہیں ہوئے، جو نکاحِ متعہ کی رخصت دیتے ہوں،سوائے ابن عباس رضی اللہ عنہما کے کہ اس کے جواز پر ان کا مشہور فتویٰ تھا۔پھر ہم تک یہ بات بھی پہنچ گئی کہ (حق معلوم ہونے پر)انہوں نے اپنے اس فتوے سے رجوع فرما لیا تھا۔‘‘
(الناسخ والمنسوخ، ص : 80)

📚امام ابو عبید رحمہ اللہ مزید فرماتے ہیں :
وَأَمَّا قَوْلُ أَہْلِ الْعِلْمِ الْیَوْمَ جَمِیعًا، مِّنْ أَہْلِ الْعِرَاقِ، وَأَہْلِ الْحِجَازِ، وَأَہْلِ الشَّامِ، وَأَصْحَابِ الْـأَثَرِ، وَأَصْحَابِ الرَّأْيِ، وَغَیْرِہِمْ، أَنَّہٗ لَا رُخْصَۃَ فِیہَا لِمُضْطَرٍّ وَّلَا لِغَیْرِہٖ، وَأَنَّہَا مَنْسُوخَۃٌ حَرَامٌ، عَلٰی مَا ذَکَرْنَا عَنِ النَّبِيِّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ وَأَصْحَابِہٖ ۔
’’اس دور میں اہل عراق،اہل حجاز اور اہل شام،نیز اصحاب الحدیث واصحاب الرائے وغیرہ سب اہل علم کا اتفاقی فتویٰ یہی ہے کہ کسی کو کوئی مجبوری ہو یانہ ہو،نکاحِ متعہ کی اجازت نہیں،نیز یہ منسوخ اور حرام ہے،جیسا کہ ہم نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام] سے ثابت کر دیا ہے۔‘‘
(الناسخ والمنسوخ، ص : 82)

📚حافظ ابو محمد،حسین بن مسعود،بغوی رحمہ اللّٰہ(م : 516ھ)فرماتے ہیں :
اِتَّفَقَ الْعُلَمَائُ عَلٰی تَحْرِیمِ نِکَاحِ الْمُتْعَۃِ، وَہُوَ کَالْإِجْمَاعِ بَیْنَ الْمُسْلِمِینَ ۔
’’علماء کرام کا نکاحِ متعہ کو حرام قرار دینے پر اتفاق ہے۔یہ مسلمانوں کا ایک اجماع ہی ہے۔‘‘
(شرح السنّۃ : 100/9)

📚حافظ،عبد الرحمن بن علی،ابن الجوزی رحمہ اللہ (579-508ھ)فرماتے ہیں :
فَقَدْ وَقَعَ الْإِتِّفَاقُ عَلَی النَّسْخِ ۔
’’نکاحِ متعہ کے منسوخ ہونے پر مسلمانوں کا اجماع ہے۔
‘‘(کشف المشکل من حدیث الصحیحین : 146/1)

📚مشہور مفسر،ابو عبد اللہ،محمد بن احمد،قرطبی رحمہ اللہ (671-600ھ)فرماتے ہیں :
فَانْعَقَدَ الْإِجْمَاعُ عَلٰی تَحْرِیمِہَا ۔
’’نکاحِ متعہ کو حرام قرار دینے پر مسلمانوں کا اجماع ہو گیا ہے۔‘‘
(تفسیر القرطبي : 133/5)

📚امام،ابو جعفر،احمد بن محمد بن سلامہ،طحاوی رحمہ اللہ (321-238ھ)فرماتے ہیں:
فَہٰذَا عُمَرُ رَضِيَ اللّٰہُ عَنْہُ قَدْ نَہٰی عَنْ مُّتْعَۃِ النِّسَائِ، بِحَضْرَۃِ أَصْحَابِ رَسُولِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ، فَلَمْ یُنْکِرْ ذٰلِکَ عَلَیْہِ مِنْہُمْ مُّنْکِرٌ، وَفِي ہٰذَا دَلِیلٌ عَلٰی مُتَابَعَتِہِمْ لَہٗ عَلٰی مَا نَہٰی عَنْہُ مِنْ ذٰلِکَ، وَفِي إِجْمَاعِہِمْ عَلَی النَّہْيِ فِي ذٰلِکَ عَنْہَا دَلِیلٌ عَلٰی نَسْخِہَا، وَحُجَّۃٌ ۔
’’سیدنا عمر رضی اللہ عنہ نے رسولِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کرام کی موجودگی میں عورتوں سے متعہ کرنے سے منع فرمایا۔ان میں سے کسی ایک نے بھی اس پر اعتراض نہیں کیا۔اس سے ثابت ہوتا ہے کہ سب صحابہ کرام متعہ سے منع کرنے میں سیدنا عمر رضی اللہ عنہ کے ہمنوا تھے۔ صحابہ کرام] کا یہ اجماع متعہ کے منسوخ ہونے کی دلیل و برہان ہے۔‘‘
(شرح معاني الآثار : 26/3)

📚شیخ الاسلام، ابو العباس،احمد بن عبد الحلیم، ابن تیمیہ رحمہ اللہ (728-661ھ)فرماتے ہیں :
وَالنِّکَاحُ الْمَبِیْحُ ہُوَ النِّکَاحُ الْمَعْرُوفُ عِنْدَ الْمُسْلِمِینَ، وَہُوَ النِّکَاحُ الَّذِي جَعَلَ اللّٰہُ فِیہِ بَیْنَ الزَّوْجَیْنِ مَوَدَّۃً وَّرَحْمَۃً ۔
’’جائز نکاح وہی ہے،جو مسلمانوں کے ہاں معروف ہے۔یہی وہ نکاح ہے،جسے اللہ تعالیٰ نے زوجین میں مودّت و رحمت کا باعث بنایا ہے۔‘‘
(مجموع الفتاوٰی : 92/32، 93)

_________&____________

*ان تمام احادیث اور سلف صالحین کے اقوال سے پتا چلا کہ نکاح متعہ قیامت تک کے لیے حرام ہے*

⁦⚠️⁩واضح رہے کہ ہمارے پیارے رسول،محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی لائی ہوئی شریعت ایک مکمل اور کامل ضابطہ حیات ہے۔ اس میں تاقیامت تبدیلی کی گنجائش نہیں،کیونکہ انسانیت کے مختلف ادوار اور مختلف حالات میں جو قوانین متغیر رہے تھے،اسلام نے ان کو مستقل کر دیا ہے۔نزولِ وحی کے زمانے سے لے کر قیامت تک کے لیے ایک ٹھوس دستور ِزندگی عطا فرما دیا گیا۔یہ کمال ہی کا تقاضا تھا کہ صرف افراد کو نہیں،بلکہ معاشرے کو بھی مدنظر رکھ کر قوانین مرتب کر دیے گئے۔ جن کاموں سے معاشرے میں خرابی واقع ہوتی تھی،ان کو بتدریج حرام کر دیا گیا۔شراب کی مثال لے لیں کہ کس طرح غیرمحسوس انداز سے مسلمان معاشرے کو اس سے پاک کیا گیا۔ پہلے نمازوں کے اوقات میں نشہ نہ کرنے کا حکم فرما کر مسلمانوں سے اس کی لَت ختم کی،پھر اس کے فوائد کی نسبت اس کی خرابیوں کے زیادہ ہونے کا بتا کر اس سے عمومی نفرت کا رجحان پیدا کیا اور آخر میں اسے مستقل طور پر حرام قرار دے دیا گیا۔
نکاحِ متعہ بھی انہی چیزوں میں سے ہے،جنہیں اسلام نے اصلاحِ معاشرہ کی خاطر ابدی طور پر حرام قرار دے دیا ہے۔جیسے شراب کی حرمت نازل ہونے سے پہلے عہد ِ رسالت میں شراب پی جاتی رہی، اسی طرح تدریجی حکمت ِعملی کے تحت عہد نبوی میں نکاحِ متعہ بھی ایک وقت تک جائز رہا،لیکن پھر اسے قیامت تک کے لیے حرام قرار دے دیا گیا اور اس کی جگہ شرعی نکاح ہی کو حتمی اور لازمی اصول بنا دیا گیا۔
اب جس طرح کسی مسلمان کا شراب کی حرمت سے پہلے تک کے عہد ِرسالت میں صحابہ کرام کے شراب پینے کے واقعات کو دلیل بنا کر شراب کو حلال قرار دینا جائز نہیں،اسی طرح کسی مسلمان کے لیے یہ بھی جائز نہیں کہ وہ حرمت ِ متعہ سے پہلے پیش آنے والے عہد ِنبوی کے واقعات کو دلیل بناتے ہوئے اب بھی نکاحِ متعہ کے جواز پر اصرار کرے۔
نکاحِ متعہ کے فرد اور معاشرے پر نہایت مضر اثرات تھے،جن کی بنا پر اسے قیامت تک کے لیے حرام کر دیا گیا۔اس کے مقابلے میں شرعی نکاح کو رائج کیا گیا،جو مفاسد سے بالکل خالی اور فرد و معاشرے کے لیے بے شمار فوائد کا حامل ہے۔
شرعی نکاح کا اہم مقصد عفت و عصمت کا تحفظ ہے،جو کہ نکاحِ متعہ سے حاصل نہیں ہوتا،نیز نکاحِ شرعی میں اہم جزو دوام و استمرار ہے،جو کہ متعہ میں نہیں پایا جاتا۔نکاحِ شرعی کا اہم فائدہ محبت و مودّت اور سکون ہے،جو کہ نکاحِ متعہ میں ناپید ہے۔نکاحِ شرعی میں بیک وقت ایک سے زائد بیویوں کا تصور تو ہے،لیکن ایک سے زائد خاوندوں کا تصور قطعاً نہیں، جبکہ نکاحِ متعہ میں ایک سے زائد خاوندوں کا تصور واضح طور پر پایا جاتا ہے۔ایک عورت کے لیے نکاحِ متعہ کے ذریعے ایک ہی دن میں بیسیوں افراد سے منہ کالا کرنے پر کوئی پابندی نہیں۔
نکاحِ متعہ کے ذریعے معاشرہ بے راہ روی کا شکار ہو جاتا ہے اور انسانوں میں بہیمانہ رویے پروان چڑھتے ہیں۔ایک عورت جب نکاحِ متعہ کے ذریعے کئی مردوں سے تعلق رکھتی ہے، تو کیا معلوم اس کی کوکھ میں پلنے والا بچہ کس کا ہے؟ایسے بچے عام طور پر خونخوار درندے ہی بنتے ہیں،پرامن شہری نہیں بن پاتے۔نکاحِ متعہ میں ولی(باپ ،بھائی) کے حقوق بھی پامال ہوتے ہیں۔عصمت جو انسانیت کا جوہر ہے،ختم ہو جاتی ہے اور ماحول میں آوارگی پھیلتی ہے۔

_________&__________

*نکاح متعہ اور جواز کے قائل شیعہ کے دلائل کا رد*

نکاحِ متعہ کی بے شمار قباحتوں میں سے ایک یہ بھی ہے کہ اس کی وجہ سے شادی شدہ خواتین بھی بدکاری کی راہ اختیار کر لیتی ہیں،جیسا کہ :

📚شیعہ کے شیخ الطائفہ،ابو جعفر،محمد بن حسن،طوسی(م : 460ھ)نے لکھا ہے :
وَلَیْسَ عَلَی الرَّجُلِ أَنْ یَّسْأَلَہَا ؛ ہَلْ لَّہَا زَوْجٌ أَمْ لَا ۔
’’نکاحِ متعہ کرنے والے مرد کے لیے عورت سے یہ پوچھنا ضروری نہیں کہ اس کا کوئی خاوند ہے یا نہیں۔‘‘
(النہایۃ، ص : 490)

*ان قباحتوں کے باوجود نکاحِ متعہ شیعہ مذہب کا بنیادی جزو ہے،جیسا کہ*

شیعہ فقیہ،محمد بن حسن،الحر العاملی(م : 1104ھ)نے لکھا ہے :
إِنَّ إِبَاحَۃَ الْمُتْعَۃِ مِنْ ضَرُورِیَّاتِ مَذْہَبِ الْإِمَامِیَّۃِ ۔
’’نکاحِ متعہ کا جائز قرار دینا امامی شیعوں کی مذہبی ضرورت ہے۔‘‘
(وسائل الشیعۃ : 245/7)

*متعہ کے جائز ہونے پر شیعہ کے من گھڑت دلائل کا رد*

🚫 *بعض لوگ قرآنِ کریم سے متعہ کے جواز کا استدلال کرنے کی ناکام سعی کرتے ہیں۔اس حوالے سے وہ سورۂ نساء کی آیت پیش کرتے ہیں*

📚فرمانِ الٰہی ہے :
{فَمَا اسْتَمْتَعْتُمْ بِہٖ مِنْہُنَّ فَآتُوہُنَّ اُجُورَہُنَّ فَرِیضَۃً}
’’جن عورتوں سے تم فائدہ اٹھاؤ، ان کو ان کے حق مہر ضروری طور پر ادا کرو۔‘‘
(سورہ نساء،آئیت نمبر-24)

ان کا کہنا ہے کہ :

اس آیت میں متعہ کے مباح ہونے کی دلیل ہے ، اوراللہ تعالی کے فرمان ان کے مہر کو اللہ تعالی کے فرماناستمتعتم سے متعہ مراد لینے کا قرینہ بنایا ہے کہ یہاں سے مراد متعہ ہے ۔

رافضيوں پر رد :

اس کا رد یہ ہے کہ : اللہ تعالی نے اس سے قبل آيت میں یہ ذکرکیا ہے کہ مرد پر کونسی عورتوں سے نکاح کرنا حرام ہے اور اس آیت میں مرد کے نکاح کے لیے حلال عورتوں کا ذکر کیا اورشادی شدہ عورت کواس کا مہر دینے کا حکم دیا ہے ۔

📚اور مشہور مفسر،علامہ قرطبی رحمہ اللہ ،ابن خُوَیْز منداد بصری(م : 390ھ) سے نقل کرتے ہیں :
وَلَا یَجُوزُ أَنْ تُحْمَلَ الْآیَۃُ عَلٰی جَوَازِ الْمُتْعَۃِ، لِأَنَّ رَسُولَ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ نَہٰی عَنْ نِّکَاحِ الْمُتْعَۃِ وَحَرَّمَہٗ، وَلِأَنَّ اللّٰہَ تَعَالٰی قَالَ : {فَانْکِحُوہُنَّ بِاِذْنِ اَہْلِہِنَّ}، وَمَعْلُومٌ أَنَّ النِّکَاحَ بِإِذْنِ الْـأَہْلِینَ ہُوَ النِّکَاحُ الشَّرْعِیُّ، بِوَلِيٍّ وَّشَاہِدَیْنِ، وَنِکَاحُ الْمُتْعَۃِ لَیْسَ کَذٰلِکَ ۔
’’اس آیت ِکریمہ سے متعہ کا جواز کشید کرنا جائز نہیں،کیونکہ ایک تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے نکاحِ متعہ سے منع فرما دیا ہے اور اسے حرام قرار دے دیا ہے،دوسرے یہ کہ اللہ تعالیٰ نے (اس سے اگلی آیت میں)ارشاد فرمایا :{فَانْکِحُوہُنَّ بِاِذْنِ اَہْلِہِنَّ}(تم ان عورتوں سے ان کے گھروالوں کی اجازت سے نکاح کرو) اور یہ بات تو معلوم ہی ہے کہ عورت کے گھروالوں کی اجازت،یعنی ولی اور دو گواہوں کی موجودگی میں جو نکاح ہوتا ہے، وہ نکاحِ شرعی ہی ہوتا ہے،نکاحِ متعہ کی صورت یہ نہیں ہوتی۔‘‘
(تفسیر القرطبي : 129/5، 130)

معلوم ہوا کہ قرآنِ کریم سے نکاحِ متعہ قطعاً ثابت نہیں ہوتا،بلکہ صرف نکاحِ شرعی کا اثبات ہوتا ہے۔

*دوسری دلیل وہ دیتے ہیں کہ کچھ صحابہ کرام جیسے حضرت ابن عباس رض وغیرہ اسکو جائز سمجھتے تھے*

تو پہلی بات یہ کہ رافضی و شیعہ تو سب صحابہ کرام کو ( نعوذ باللہ ) کافر قرار دیتے ہیں ، تو پھر ان کے افعال سے استدلال کیوں کرتے ہیں؟؟

اور دوسری بات جن صحابہ سے متعہ کے جواز کا قول ملتاہے انہیں تحریم متعہ کی دلیل نہیں پہنچی اس لیے انہوں نے جواز کا قول کہا اور ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما کے اباحت متعہ کے قول پر صحابہ کرام نے تو رد بھی کیا ہے ( جن میں علی بن ابی طالب ، اورعبداللہ بن زبیر رضي اللہ تعالی عنہم ) شامل ہیں، جیسا کہ اوپر ہم نے احادیث کا مطالعہ کیا ہے،

*اللہ پاک سے دعا ہے کہ صحیح معنوں میں ہمیں دین اسلام پر عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے، آمین*

(( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب ))

🌹اپنے موبائل پر خالص قران و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

🌷آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!
🌷سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے کے لئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*
+923036501765

آفیشل ویب سائٹ
http://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں