271

سوال_ شب معراج کی رات میں جشن منانے یا عبادت کرنے کی شرعی حیثیت​ کیا ہے؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-228″
سوال_ شب معراج کی رات میں جشن منانے یا عبادت کرنے کی شرعی حیثیت​ کیا ہے؟

​Published Date:3-4-2019

جواب:
الحمدللہ:

*گزشتہ سلسلہ نمبر-219 میں ہم نے ماہ رجب اور شب معراج کی فضیلت، عبادات، نوافل اور روزوں کے متعلقہ تمام ضعیف، من گھڑت، اور موضوع احادیث کی وضاحت کر دی تھی، کہ اس ماہ رجب کے اندر کسی بھی خاص عبادت کی کوئی فضیلت کسی بھی صحیح حدیث سے ثابت نہیں،*

تفصیل کے لیے دیکھیں سلسلہ نمبر-219

*شب معراج کی شرعی حیثیت*

اسراء اور معراج کی شب اللہ عزوجل کے ہاں عظیم نشانیوں میں سے ہے جو نبی کریم ﷺ کی صداقت اور اللہ کے آپ کے عظیم مقام و مرتبہ پر دلالت کرتی ہے، نیز اس سے اللہ عزوجل کی حیرت کن قدرت اور اس کے اپنی تمام مخلوقات پر عالی و بلند ہونے کاثبوت ملتا ہے،

📚 قرآن میں اللہ تعالی نے فرمایا :
سُبْحٰنَ الَّذِيْٓ اَسْرٰى بِعَبْدِہٖ لَيْلًا مِّنَ الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ اِلَى الْمَسْجِدِ الْاَقْصَا الَّذِيْ بٰرَكْنَا حَوْلَہٗ لِنُرِيَہٗ مِنْ اٰيٰتِنَا۝۰ۭ اِنَّہٗ ہُوَالسَّمِيْعُ الْبَصِيْرُ۝۱
” پاک ہے وہ ذات۔ اللہ تعالی ۔ جو اپنے بندے کو رات ہی میں مسجد حرام سے مسجد اقصیٰ تک لے گیا جس کے آس پاس ہم نے برکت دے رکھی ہے، اس لئے کہ ہم اسے اپنی قدرت کے بعض نمونے دکھائیں، یقیناً اللہ تعالی ہی خوب سننے والا اور دیکھنے والا ہے”۔
( الاسراء، آئیت نمبر-1)

رسول اللہ ﷺ سے تواتر کے ساتھ ثابت ہے کہ آپ ﷺ کو آسمان پر لے جایا گیا ، آپ ﷺ کی خاطر آسمانوں کے دروازے کھولے گئے یہاں تک کہ ساتویں آسمان سے آگے گزر گئے ، وہاں پر آپ کے رب نے اپنے ارادہ کے مطابق پردے کے پیچھے سے آپ سے گفتگو فرمائی اور پانچ وقت کی نمازیں فرض کیں تھیں، پھر ہمارے نبی محمد ﷺ بار بار اللہ کے پاس جاتے اور تخفیف کاسوال کرتے رہے یہاں تک کہ اللہ نے اسے باعتبار فرضیت پانچ وقت کی کردیا اور اجروثواب پچاس نمازوں ہی کاباقی رکھا، کیونکہ ہر نیکی دس گنا بڑھائی جاتی ہے،
لہذا اللہ تعالی ہی تمام ترنعمتوں پر حمد و شکر کاسزاوار ہے،

*شب معراج کی تاریخ میں اختلاف مبنی بر حکمت ہے*

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم معراج پر گئے یہ ایک مستند بات ہے جسکا کوئی انکاری نہیں لیکن وہ رات جس میں اسراء و معراج کاواقعہ پیش آیا اس کی تاریخ و تعیین کے بارے میں کوئی صحیح حدیث وارد نہیں ہے، بلکہ اس کی تعیین میں جو روایتیں بھی آئی ہیں محدثین کے نزدیک نبی ﷺ سے ثابت نہیں ہیں ، اور اس شب کو لوگوں کے ذہنوں سے بھلادینے میں اللہ تعالی کی کوئی بڑی حکمت ضرور پوشیدہ ہے

ماہ رجب کی27تاریخ کو بعض لوگ ’’شب ِ معراج ‘‘ ہونے کے زعم میں جشن مناتے ہیں ،رات کو چراغاں کرتے ہیں اور خود ساختہ نمازیں پڑھتے ہیں ۔ان امور کی شرعی حیثیت متعین کرنے سے پہلے ضروری ہے کہ ’’شب ِ معراج ‘‘کاتعین ہو۔

جب محدثین و مؤرخین کی تالیف کردہ کتب کا مطالعہ کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ 27 ویں شب کے ’’شب ِ معراج ‘‘ قرار پانے سے پہلے خود ماہ ِ رجب کے ماہ ِ معراج ہونے پربھی علمائے تاریخ کا اتفاق نہیں

📚معروف مفسر ومؤرخ امام ابن کثیر ؒ نے اپنی ضخیم کتاب ’’البدایہ و النہایہ‘‘ کے تیسرے جز میں اسراء و معراج کا واقعہ نقل کرنے سے پہلے متعدد روایات بیان فرمائی ہیں۔وہاں انہوں نے امام بیہقی ؒ کے حوالہ سے امام ابو شہاب زہری ؒ کا قول نقل کیا ہے جس میں وہ فرماتے ہیں:
’’نبی ﷺ کو ہجرت ِ مدینہ سے ایک سال پہلے سفرِ معراج کرایا گیا۔ ‘‘

یہی قول مشہور تابعی جناب عروہ ؒ کا ہے۔ امام حاکم کے حوالے سے انہوں نے حضرت سدی کا قول بھی ذکر کیا ہے جس میں وہ فرماتے ہیں:
’’نبی ﷺ کو ہجرت سے16 ماہ قبل معراج کرایا گیا۔‘‘
لہٰذا امام زہریؒ و عروہ ؒ کے قول کے مطابق ماہ ِ معراج ربیع الاول بنتا ہے جبکہ وہ بھی ہجرت سے پہلے کا واقعہ ہے۔

یہی وجہ ہے کہ حافظ ابن عساکر ؒ نے اسراء و معراج کی احادیث کا ذکر ہی اوائلِ بعثت کے واقعات میں کیا ہے اور حضرت سدی ؒ کے قول کے مطابق معراج کا واقعہ ماہ ِ ذی القعدہ میں بنتا ہے ( البدایہ والنہایہ) ۔

ماہ ِ ربیع الاول کے ماہ ِ معراج ہونے سے متعلق امام زہریؒ و عروہؒ کے قول کی تائید حضرت جابر بن عبد اللہ ؓ سے مروی ایک اثر سے بھی ہوتی تھی لیکن اسکی سند میں امام ابن کثیر ؒ کے نزدیک انقطاع ہے ۔

🚫یہ اثر مصنف ابن ابی شیبہ میں مذکور ہے جس میں وہ فرماتے ہیں:
’’نبی ﷺ عام الفیل ماہ ِ ربیع الاول کی12تاریخ کو پیر کے دن پیدا ہوئے ،اُسی دن آپ ﷺ کی بعثت ہوئی ،اُسی دن آپ ﷺ کو آسمان کی طرف معراج کرایا گیا ،اُسی دن آپ ﷺ نے ہجرت کی اور اُسی دن آپ ﷺ نے وفات پائی۔ ‘‘ ( البدایہ و النہایہ )۔

یہاں بھی معراج کے ماہ ِ ربیع الاول میں کرائے جانے کا ذکر ہے مگر یہ روایت چونکہ منقطع سند والی ہے لہٰذا اس سے استدلال درست نہیں۔

اسی طرح ماہ ِ ربیع الثانی، ماہ ِ رجب ،ماہ ِ شوال اور ماہ ِ ذو الحجہ میں معراج کرائے جانے کی روایات بھی ملتی ہیں۔ ماہ ِ رجب کی بھی،

*اور جب ماہ ِ معراج پر ہی اتفاق نہیں تو تاریخِ معراج پر اتفاق کیسے ہوسکتا ہے ؟*

مختصر یہ کہ اسی طرح ہی تاریخِ معراج میں بھی اختلاف پایا جاتا ہے اور یہ بات بھی حکمت ِ الٰہی سے خالی نہیں کہ ماہ و تاریخِ معراج پر اتفاق نہ ہوسکا تاکہ طرح طرح کی بدعات کو وجود میں لانے والوں کو یہ بنیادی چیزہی متفق علیہ نہ ملے ورنہ اللہ تعالیٰ سے کیا بعید تھا کہ تمام مؤرخین کا اتفاق ہوجاتا ۔

مشہور روایت کے مطابق اگر ماہِ رجب اور اس کی بھی 27 تاریخ کوہی ’’شب معراج ‘‘ مان لیا جائے تو اس رات میں چراغاں کا اہتمام کرنے ، جشن منانے ، خوشیاں منانے کے رنگا رنگ انداز اختیار کرنے ،دن کو روزہ رکھنے اور رات کو نوافل پڑھنے کی شرعی حیثیت کا تعین کیا جائے ۔

اس سلسلہ میں سب سے پہلی اور بنیادی بات یہ ہے کہ نبی ﷺ ، خلفائے راشدینؓ و صحابہ کرام ؓ،ائمہ اربعہؒ اور علمائے دین و سلف صالحین کسی سے بھی یہ مروجہ امور ثابت نہیں جنہیں جشن معراج کے نام سے کیا جاتا ہے۔ امام الانبیاء ﷺ اس عظیم معجزہ کے بعد ایک طویل مدت تک صحابہ کرام ؓ کے ما بین موجود رہے مگر آپ ﷺ نے نہ تو خود یہ کام کئے اور نہ ہی کسی کو ان کے کرنے کا حکم فرمایا۔ آپ ﷺ کے اشارۂ ا برو پر جانیں نچھاور کرنے والے صحابہ کرامؓ، تابعین ا ور ائمہ میں سے کسی سے بھی ان امور کا پتہ نہیں چلتا۔

لہذا مسلمانوں کے لئے اس میں کسی طرح کاجشن منانا اسے کسی عبادت کے لئے خاص کرنا جائز نہیں ہے، کیونکہ نبی ﷺ اور صحابہ کرام نے نہ تو اس میں کسی طرح کاکوئی جشن منایا اور نہ ہی اسی کسی عبادت کے لئے خاص کیا، اور اگر اس شب میں جشن منانا اور اجتماع کرناشرعاً ثابت ہوتا تونبی ﷺ اپنے قول یافعل سے اسے امت کے لئے ضرور واضح کرتے ، اور اگر عہد نبوی یاعہد صحابہ میں ایسی کوئی چیز ہوتی تووہ بلاشبہ معروف و مشہور ہوتی اور صحابہ کرام اسے نقل کرکے ہم تک ضرور پہنچاتے کیونکہ انہوں نے نبی ﷺ سے نقل کراکے امت کو ہر وہ بات پہنچائی جس کی امت کو ضرورت تھی ، اور دین کے کسی بھی معاملہ میں کوئی کوتاہی نہ کی بلکہ وہ نیکی کے ہر کام میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے والے تھے ۔ چنانچہ اگر اس شب جشن منانے اور محفل معراج منعقد کرنے کی کوئی شرعی حیثیت ہوتی تووہ سب سے پہلے اس پر عمل کرتے۔
نبی ﷺ امت کے سب سے زیادہ خیرخواہ تھے،آپ ﷺ نے پیغام الہی کو پورے طور پر پہنچا کرامانت کی ادائیگی فرما دی، لہذا اگر اس شب کی تعظیم اور س میں جشن منانا دین اسلام سے ہوتا توآپ ﷺ قطعاً اسے نہ چھوڑتے اور نہ ہی اسے چھپاتے ، لیکن جب عہد نبوی اور عہد صحابہ میں یہ سب کچھ نہیں ہوا تو یہ بات واضح ہوگئی کہ شب معراج کی تعظیم اور س کے اجتماع کادین اسلام سے کوئی واسطہ نہیں ہے،

*ﺷﺐ ﻣﻌﺮﺍﺝ کے بارے اہلسنت علماء کے اقوال*

27ﺭﺟﺐ ﮐﯽ ﺷﺐ، ﺷﺐ ﻣﻌﺮﺍﺝ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﮯ ،ﺍﺱﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﺹ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﭘﺮ ﺧﺎﺹ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﻧﻔﻞ ﻧﻤﺎﺯﯾﮟ ﭘﮍﮬﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﻮ ” ﺻﻠﻮٰﺓ ﺍﻟﺮﻏﺎﺋﺐ“ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ،ﺍﺱ ﺷﺐ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺣﻀﻮﺭ ﺍﮐﺮﻡ ﺻﻠﯽﺍﻟﻠﻪ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺍﺱ ﺷﺐ ﮐﻮ ﻣﻌﺮﺍﺝ ﭘﺮ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ،ﭘﮩﻠﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﻣﻌﺮﺍﺝ ﮐﯽ ﺗﺎ ﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﮨﮯ،ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﻌﯿﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ جیسا کہ ہم اوپر وضاحت پیش کر چکے ہیں، ﮐﮧ ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧﺳﺘﺎﺋﯿﺲ ﺭﺟﺐ ﮐﯽ ﺷﺐ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ نہیں ﺁﯾﺎ،

ﺑﺎﻟﻔﺮﺽ ﻭﺍﻟﻤﺤﺎﻝ ﺍﮔﺮﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺮ ﺑﮭﯽ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻗﺮﺁﻥ ﻭﺣﺪﯾﺚ ﺍﻭﺭ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﻭﺗﺎﺑﻌﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﻘﻮﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﻓﻘﮩﺎﺀ ﻧﮯ ﺍﺱﮐﯽ ﺑﮭﺮ ﭘﻮﺭ ﺗﺮﺩﯾﺪ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮨﮯ۔

📚ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺤﯽ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻣﺎﻡ ﻧﻮﻭﯼ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ: 27ﺭﺟﺐ ﺍﻭﺭ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻨﺪﺭﮨﻮﯾﮟ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﻧﻤﺎﺯﯾﮟ ﺳﻨﺖ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﮑﮧ ﻧﺎﺟﺎﺋﺰ ﺍﻭﺭ ﺑﺪﻋﺖ ﮨﯿﮟ۔
یاد رہے” ﺍﺱ ﺷﺐ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻧﻮﺍﻓﻞ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﮩﯿﮟ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ،ﻧﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺣﻀﻮﺭ اکرمﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﻪﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ ، ﻧﮧ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻋﻨﮩﻢ ﻧﮯ،ﻧﮧ ﺗﺎﺑﻌﯿﻦ ﻋﻈﺎﻡ ﺭﺣﮩﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ۔

📚مشہور حنفی فقیہ علامہ ﺍﺑﻦ ﮨﻤﺎﻡ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ کے شاگردﻋﻼﻣﮧ ﺣﻠﺒﯽ ﺷﯿﺦ ﻧﮯ ﻏﻨﯿﺘﮧ ﺍﻟﻤﺴﺘﻤﻠﯽ، ﺹ 411: ﻣﯿﮟ،

📚ﻋﻼﻣﮧ ﺍﺑﻦ ﻧﺠﯿﻢ ﺭﺣﻤﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﻟﺠﺮ ﺍﻟﺮ ﺍﺋﻖ ﺷﺮﺡ ﮐﻨﺰ ﺍﻟﺪ ﻗﺎﺋﻖ ،ﺝ 2: ، ﺹ :56، ﻣﯿﮟ،

📚 ﻋﻼﻣﮧ ﻃﺤﻄﺎﻭﯼ ﻧﮯ ﻣﺮﺍﻗﯽ ﺍﻟﻔﻼﺡ ،ﺹ 22: ﻣﯿﮟ،

ﺍﺱ ﺭﻭﺍﺝ ﭘﺮ ﻧﮑﯿﺮ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺟﻮ ﻓﻀﺎﺋﻞ ﻧﻘﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺭﺩﮐﯿﺎ ﮨﮯ۔
( ﻓﺘﺎﻭﯼٰﻣﺤﻤﻮﺩﯾﮧ: 3/284 ،ﺍﺩﺍﺭﮦ ﺍﻟﻔﺎﺭﻭﻕ ﮐﺮﺍﭼﯽ)

*27 ﺭﺟﺐ ﮐﺎ ﺭﻭﺯﮦ*

ﻋﻮﺍﻡ ﺍﻟﻨﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﺘﺎﺋﯿﺲ ﺭﺟﺐ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﮮ ﮐﻮ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻭﺍﻻﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭﻭﮦ ﺭﺟﺐ ﮐﯽ ﺳﺘﺎﺋﯿﺴﻮﯾﮟ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﻮ ﺭﻭﺯﮦﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﺎ ﺛﻮﺍﺏ ﺍﯾﮏ ﮨﺰﺍﺭ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺳﯽﻭﺍﺳﻄﮯ ﺍﺱ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﻮ ” ﮨﺰﺍﺭﯼ ﺭﻭﺯﮦ “ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ،ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﻓﻀﯿﻠﺖﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﮐﺜﺮ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﺍﺱ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﻌﺾ ﺟﻮ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺿﻌﯿﻒ ﮨﯿﮟ، ﺍﺱ ﻟﯿﮯﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺛﻮﺍﺏ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺩﻥ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺳﻨﺖ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﻘﺎد نا ﺭﮐﮭﺎﺟﺎﺋﮯ۔ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﺮﺍﻡ ﻧﮯﺍﭘﻨﯽ ﺗﺼﺎﻧﯿﻒ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺗﺮﺩﯾﺪ ﮐﯽ ﮨﮯ ،

📚ﺣﺎﻓﻆ ﺍﺑﻦ ﺣﺠﺮﻋﺴﻘﻼﻧﯽ ﻧﮯ ”ﺗﺒﯿﯿﻦ ﺍﻟﻌﺠﺐ ﺑﻤﺎ ﻭﺭﺩ ﻓﻲ ﻓﻀﻞ ﺭﺟﺐ “ ﮐﮯ ﻧﺎﻡﺳﮯ ﺍﺱ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﭘﺮ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﮭﯽ ﮨﮯ،ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺭﺟﺐ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺿﻌﯿﻒ ﺍﻭﺭ ﻣﻮﺿﻮﻉﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﭘﺮ ﻣﺤﺪﺛﺎﻧﮧ ﮐﻼﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺑﺎﻃﻞ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔

(( رجب کے روزوں بارے مزید تفصیل کے لیے دیکھیں سلسلہ نمبر-219 ))

*شب معراج بدعت ہے اور شریعت نے بدعات کا رد کیا ہے*

اللہ تبارک و تعالی نے اس امت کے لئے اپنے دین کی تکمیل فرمادی ہے، اور ان پر اپنی نعمت کا اتمام کردیاہے، اور ہر اس شخص پر عیب لگایا ہے جومرضی الہی کے خلاف بدعات ایجاد کرے،

📚 اللہ سبحانہ و تعالی نے اپنی کتاب مبین قرآن کریم میں سورۃ المائدہ کے اندر فرمایا :
اَلْيَوْمَ اَكْمَلْتُ لَكُمْ دِيْنَكُمْ وَاَتْمَمْتُ عَلَيْكُمْ نِعْمَتِيْ وَرَضِيْتُ لَكُمُ الْاِسْلَامَ دِيْنًا۔
” آج میں نے تمہارے لئے دین کومکمل کردیا، اور تم پر اپنا انعام پورا کردیا اور تمہارے لئے اسلام کے دین ہونے پررضامند ہوگیا”۔
(سورہ المائدہ،3)

📚اللہ عزوجل نے سورۃ الشوری میں فرمایا :
اَمْ لَہُمْ شُرَكٰۗؤُا شَرَعُوْا لَہُمْ مِّنَ الدِّيْنِ مَا لَمْ يَاْذَنْۢ بِہِ اللہُ۝۰ۭ وَلَوْلَا كَلِمَۃُ الْفَصْلِ لَـقُضِيَ بَيْنَہُمْ۝۰ۭ وَاِنَّ الظّٰلِـمِيْنَ لَہُمْ عَذَابٌ اَلِيْمٌ۝۲۱
”کیا ان لوگوں نے اسے اللہ کے شریک مقرر کررکھے ہیں جنہوں نے ایسے احکام دین مقرر کر دیئے ہیں جو اللہ تعالی کے فرمائے ہوئے نہیں ہیں ، اگر فیصلہ کردیاجاتا ، یقیناً ان ظالموں کے لئے یہی درد ناک عذاب ہے ”۔(سورہ الشوریٰ:21)

*رسول اللہ ﷺ سے صحیح احادیث میں بدعات سے بچنے کی تاکید اورا س کے گمرای ہونے کی صراحت ثابت ہے ، تاکہ امت کے افراد ان کے بھیانک خطرات سے آگاہ ہوکر ان کے ارتکاب سے پرہیز و اجتناب کریں*

📚چنانچہ صحیح بخاری ومسلم میں حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا:
مَنْ أَحْدَثَ فِي أَمْرِنَا هَذَا مَا لَيْسَ مِنْهُ فَهُوَ رَدٌّ
” جس نے ہمارے اس دین میں کوئی نیاکام نکالا جو دراصل اس میں سے نہیں ہے وہ ناقابل قبول ہے”۔
(صحیح بخاری ،2697)
صحیح مسلم، 1720)

📚اور صحیح مسلم کی ایک روایت میں یہ الفاظ ہیں کہ آپ ﷺ نے فرمایا :
مَنْ عَمِلَ عَمَلًا لَيْسَ عَلَيْهِ أَمْرُنَا فَهُوَ رَدٌّ
” جس نے کوئی ایسا عمل کیاجو ہمارے اسلام میں نہیں تووہ ناقابل قبول ہے”۔
(صحیح مسلم، 1721)

📚اور صحیح مسلم میں حضرت جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ جمعہ کے دن اپنے خطبہ میں فرمایا کرتے تھے:”
أَمَّا بَعْدُ فَإِنَّ خَيْرَ الْحَدِيثِ كِتَابُ اللَّهِ، وَخَيْرُ الْهُدَى هُدَى مُحَمَّدٍ، وَشَرُّ الْأُمُورِ مُحْدَثَاتُهَا، وَكُلُّ بِدْعَةٍ ضَلَالَةٌ
حمدو صلاۃ کے بعد : بیشک بہترین بات اللہ کی کتاب اور سب سے بہتر طریقہ محمد ﷺ کاطریقہ ہے، اور بدترین کام نئی ایجاد کردہ بدعتیں ہیں اور ہر بدعت گمراہی ہے۔
(صحیح مسلم، 870)

📚اور سنن ابو داؤد میں حضرت عرباض بن ساریہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے ہمیں انتہائی جامع نصیحت فرمائی جس سے دلوں میں لرزہ طاری ہوگیا اور آنکھیں اشکبار ہوگئیں، توہم نے کہا اے اللہ کے رسول ﷺ یہ الوداعی پیغام معلوم ہوتا ہے لہذا آپ ہمیں وصیت فرمائیے آپ ﷺ نے فرمایا : ” میں تمہیں اللہ سے ڈرتے رہنے ، حاکم وقت کی بات سننے اور ماننے کی وصیت کرتاہوں اگرچہ تم پر حبشی غلام ہی حاکم بن جائے، اورمیرے بعد جو شخص زندہ رہے گا وہ بہت سے اختلاف دیکھےگا ، اس وقت تم میری سنت اور ہدایت یافتہ خلفاء راشدین کی سنت کو لازم پکڑو اسے دانتوں سے مضبوط پکڑلو اور دین میں نئی نئی باتوں سے بچو۔ کیونکہ ہر نئی چیز بدعت ہے اور ہر بدعت گمراہی ہے”۔
(سنن ابو داؤد حدیث نمبر-4607)

*مفتی اعظم شیخ ابن باز کا فتویٰ*

سوال: بعض لوگ ماہ رجب کو بعض عبادات کے لئے خاص کرتے ہیں جیسے صلاۃ الرغائب، اور 27ویں شب کو شب بیداری (شبِ معراج)، پس کیا ان کی شریعت میں کوئی بنیاد واصل ہے؟ جزاکم اللہ خیراً

جواب از شیخ عبدالعزیز بن عبداللہ بن باز رحمہ اللہ:

رجب کو صلاۃ الرغائب ادا کرنے کے لئے اور 27 شب کو لیلۃ الاسراء اور شب معراج سمجھتے ہوئے شب بیداری کرنا بدعت ہے جائز نہیں، اور شریعت میں اس کی کوئی اصل نہیں، اس بارے میں بہت سے محققین علماء کرام نے تنبیہ فرمائی ہے۔ ہم نے بھی کئی بار اس بار ےمیں لکھا ہے اور لوگوں پر یہ واضح کیا ہے کہ صلاۃ الرغائب بدعت ہے جو کہ بعض لوگ رجب کی پہلی شبِ جمعہ کو ادا کرتے ہیں۔ اسی طرح سے 27ویں شب کو یہ اعتقاد رکھتے ہوئے کہ یہ لیلۃ الاسراء اور شب معراج ہے مناتے ہیں، یہ سب بدعات ہیں جن کی شریعت میں کوئی اصل نہیں۔ شبِ معراج کی رات کا تعین ہی ثابت نہیں اور اگر بالفرض معلوم بھی ہوجائے تو اسے منانا جائز نہیں؛ کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اسے نہیں منایا اور نہ ہی خلفائے راشدین اور دیگر صحابہ کرام y نے۔ پس ’’لو كان ذلك سنة لسبقونا إليها‘‘ (اگر یہ سنت ہوتی تو وہ اس پر عمل پیرا ہونے میں ہم پر سبقت لے جاتے) اور ساری کی ساری خیر وبھلائی ان کی اتباع کرنے اور ان کے منہج کی پیروی کرنے میں ہے،
(Islamqa.info)

رسول اکرم ﷺ کے صحابہ اور سلف صالحین بھی بدعتوں سے ڈرانے اور ان سے بچنے کی تاکید کرتے رہے کیونکہ بدعات دین میں زیادتی اور مرضی الہی کے خلاف شریعت شریعت سازی ہیں بلکہ یہ اللہ کے دشمن یہود و نصاری کی مشابہت ہے، جس طرح انہوں نے اپنے اپنے دین یہودیت اور عیسائیت میں نئی چیزیں ایجاد کرلیں نیز بدعات ایجاد کرنے کالازمی نتیجہ دین اسلام کونقص اور عدم کمال سے مہتم کرنا ہے۔
اور یہ تو واضح ہی ہے کہ بدعات کے ایجاد کرنے میں بہت بڑی خرابی اور شریعت کی انتہائی خلاف ورزی ہے، نیز اللہ عزوجل کے اس فرمان اَلْيَوْمَ اَكْمَلْتُ لَكُمْ دِيْنَكُمْ ” آج میں نے تمہارے لئے تمہارا دین مکمل کر دیا ہے” سے ٹکراؤ اور بدعات سے ڈرانے اور نفرت دلانے والی احادیث رسول کی صریح مخالفت بھی ہے۔
مجھے امید ہے کہ اس مسئلہ میں ہماری طرف سے پیش کردہ دلیلیں حق کے طلبگار کے لئے بدعت شب معراج کے انکار اور اس سے ڈرانے کے لئے کافی اور تسلی بخش ہوں گی ، اور ان سے یہ بھی واضح ہوگیا ہوگاکہ شب معراج کے جشن اور اجتماع کااسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔
چونکہ اللہ نے مسلمان بھائیوں کے ساتھ خیرخواہی اور ان تک شریعت کی تبلیغ و اشاعت کو واجب اور علم کے چھپانے کو حرام قرار دیا ہے ، تومیں نے مناسب سمجھا کہ مسلمان بھائیوں کو اس بدعت سے باخبر کردوں جو بیشتر ملکوں میں پھیلی ہوئی ہے یہاں تک کہ بعض لوگوں نے اسے دین کا ایک حصہ سمجھ لیا ہے۔
اللہ تعالی سے دعا ہے کہ وہ مسلمانوں کے احوال کی اصلاح فرمادے انہیں دین کی سمجھ عطا فرما دے اور ہمیں اور ان کو حق پر کاربند اور ثابت قدم رہنے اور خلاف حق امور سے گریز کرنے کی توفیق عطافرمائے، وہ اللہ اس کاکارساز اور اس پر قابو ہے۔
اور اللہ اپنے بندے اور رسول ہمارے نبی محمد ﷺ پر اور آپ کے اہل و عیال اور ساتھیوں پررحمت و سلامتی اور برکت نازل فرمائے۔ آمین

((( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب )))

🌷اپنے موبائل پر خالص قران و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

🌷آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!
🌷سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے کے لئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*
+923036501765

آفیشل ویب سائٹ
http://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں