819

سوال_دلہا کے ہاتھوں پر مہندی لگانا کیسا ہے؟ اور کیا مردوں کے لئے زعفرانی رنگ کا استعمال جائز ہے؟

“سلسلہ سوال و جواب نمبر-38″
سوال_شادی وغیرہ کے موقع پر دلہا کے ہاتھوں پر مہندی لگانا اور کپڑوں پر زعفرانی رنگ کا استعمال شرعاً کیسا ہے؟

Published Date:19-3-2018
جواب…!
الحمدللہ۔۔۔۔!!

*دلہا کے ہاتھوں کو مہندی سے یا کپڑوں کو زعفرانی رنگ سے رنگنا جائز نہیں،کیونکہ ان میں عورتوں کی مشابہت ہوتی ہے*

📚جامع ترمذی
کتاب: آداب اور اجازت لینے کا بیان
باب: مردوں اور عورتوں کی خوشبو کے بارے میں
حدیث نمبر: 2788
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ الْحَنَفِيُّ، عَنْ سَعِيدٍ، عَنْ قَتَادَةَ، عَنِ الْحَسَنِ، عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ، قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ لِي النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏  إِنَّ خَيْرَ طِيبِ الرَّجُلِ مَا ظَهَرَ رِيحُهُ وَخَفِيَ لَوْنُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَخَيْرَ طِيبِ النِّسَاءِ مَا ظَهَرَ لَوْنُهُ وَخَفِيَ رِيحُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَنَهَى عَنْ مِيثَرَةِ الْأُرْجُوَانِ ، ‏‏‏‏‏‏هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ مِنْ هَذَا الْوَجْهِ.
ترجمہ:
عمران بن حصین ؓ کہتے ہیں کہ  نبی اکرم  ﷺ  نے مجھ سے فرمایا:  مرد کی بہترین خوشبو وہ ہے جس کی مہک پھیلے اور اس کا رنگ چھپا رہے، اور عورتوں کی بہترین خوشبو وہ ہے جس کا رنگ ظاہر ہو اور خوشبو چھپی رہے ، اور آپ  ﷺ  نے زین کے اوپر انتہائی سرخ ریشمی کپڑا ڈالنے سے منع فرمایا،
تخریج دارالدعوہ:
تفرد بہ المؤلف (تحفة الأشراف: ١٠٨٠٥)،
و مسند احمد (٤/٤٤٢) (صحیح  )  
قال الشيخ الألباني:  صحيح، المشکاة (4443)، مختصر الشمائل (188)،
الرد علی الکتاني ص (11)  
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني: حديث نمبر 2788

ایک روایت میں یہ الفاظ ہیں،

📚جامع ترمذی
کتاب: آداب اور اجازت لینے کا بیان
باب: مردوں اور عورتوں کی خوشبو کے بارے میں
حدیث نمبر: 2787
حَدَّثَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ، حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ الْحَفَرِيُّ، عَنْ سُفْيَانَ، عَنِ الْجُرَيْرِيِّ، عَنْ أَبِي نَضْرَةَ، عَنْ رَجُلٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏  طِيبُ الرِّجَالِ مَا ظَهَرَ رِيحُهُ وَخَفِيَ لَوْنُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَطِيبُ النِّسَاءِ مَا ظَهَرَ لَوْنُهُ وَخَفِيَ رِيحُهُ .
ترجمہ:
ابوہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ  رسول اللہ  ﷺ  نے فرمایا:  مردوں کی خوشبو وہ ہے جس کی مہک پھیل رہی ہو اور رنگ چھپا ہوا ہو اور عورتوں کی خوشبو وہ ہے جس کا رنگ ظاہر ہو لیکن مہک اس کی چھپی ہوئی ہو،
امام ترمذی کہتے ہیں: یہ حدیث حسن ہے۔  
تخریج دارالدعوہ: 
سنن ابی داود/ النکاح ٥٠ (٢١٧٤)،
سنن النسائی/الزینة ٣٢ (٥١٢٠، ٥١٢١)
(تحفة الأشراف: ١٥٨٦)، و مسند احمد (٢/٥٤١) (حسن)
(سند میں ” رجل ” مبہم راوی ہے، لیکن شاہد کی وجہ سے یہ حدیث حسن لغیرہ ہے، ملاحظہ ہو صحیح الترغیب رقم: ٤٠٢٤ )
قال الشيخ الألباني:  صحيح، المشکاة (4443)، مختصر الشمائل (188)

وضاحت_
مطلب مرد ایسی خوشبو لگائیں جسکی بو ہو اور رنگ نا ہو جیسے، عطر اور عود وغیرہ،
اور عورتیں ایسی خوشبو لگائیں جسکا رنگ ہو مگر خوشبو نا ہو مثلاً زعفران اور مہندی وغیرہ،

*ہاتھوں پر مہندی،رنگ وغیرہ لگانا عورتوں کا خاصہ ہے لہذا مردوں کو عورتوں کی مشابہت سے بچنا چاہیے کیونکہ*

📚صحیح بخاری
کتاب: لباس کا بیان
باب: مردوں کا عورتوں کی سی صورت اور عورتوں کا مردوں کی سی صورت اختیار کرنے کا بیان
حدیث نمبر: 5885
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ قَتَادَةَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَعَنَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمُتَشَبِّهِينَ مِنَ الرِّجَالِ بِالنِّسَاءِ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمُتَشَبِّهَاتِ مِنَ النِّسَاءِ بِالرِّجَالِ، ‏‏‏‏
ترجمہ:
ہم سے محمد بن بشار نے بیان کیا، کہا ہم سے غندر نے بیان کیا، ان سے شعبہ نے بیان کیا، ان سے قتادہ نے، ان سے عکرمہ نے اور ان سے ابن عباس ؓ نے بیان کیا کہ  رسول اللہ  ﷺ  نے ان مردوں پر لعنت بھیجی جو عورتوں جیسا چال چلن اختیار کریں اور ان عورتوں پر لعنت بھیجی جو مردوں جیسا چال چلن اختیار کریں۔

📚سنن ابوداؤد
کتاب: ادب کا بیان
باب: ہیجڑوں کا بیان
حدیث نمبر: 4928
حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ أَبَا أُسَامَةَ أَخْبَرَهُمْ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُفَضَّلِ بْنِ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَوْزَاعِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْأَبِي يَسَارٍ الْقُرَشِيِّ،‏‏‏‏عَنْ أَبِي هَاشِمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَأُتِيَ بِمُخَنَّثٍ قَدْ خَضَّبَ يَدَيْهِ وَرِجْلَيْهِ بِالْحِنَّاءِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا بَالُ هَذَا ؟ فَقِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏يَتَشَبَّهُ بِالنِّسَاءِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَمَرَ بِهِ فَنُفِيَ إِلَى النَّقِيعِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالُوا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا نَقْتُلُهُ ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي نُهِيتُ عَنْ قَتْلِ الْمُصَلِّينَقَالَ أَبُو أُسَامَةَ:‏‏‏‏ وَالنَّقِيعُ نَاحِيَةٌ عَنْ الْمَدِينَةِ وَلَيْسَ بِالْبَقِيعِ.
ترجمہ:
ابوہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ نبی اکرم ﷺ کے پاس ایک ہیجڑا لایا گیا جس نے اپنے ہاتھوں اور پیروں میں مہندی لگا رکھی تھی تو نبی اکرم ﷺ نے فرمایا: اس کا کیا حال ہے؟ عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! یہ عورتوں جیسا بنتا ہے، آپ نے حکم دیا تو اسے نقیع کی طرف نکال دیا گیا، لوگوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم اسے قتل نہ کردیں؟، آپ نے فرمایا: مجھے نماز پڑھنے والوں کو قتل کرنے سے منع کیا گیا ہے نقیع مدینے کے نواح میں ایک جگہ ہے اس سے مراد بقیع (مدینہ کا قبرستان) نہیں ہے۔
تخریج دارالدعوہ:
تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف: ١٥٤٦٤) (صحیح )

__________&_______

*واضح رہے بعض احادیث میں مردوں کیلئے زعفرانی رنگ کے استعمال کا ذکر بھی ملتا ہے، جیسا کہ چند ایک حدیث یہ ہیں،*

📚سنن نسائی
کتاب: زینت (آرائش) سے متعلق احادیت مبارکہ
باب: داڑھی زرد کرنے سے متعلق
حدیث نمبر: 5245
أَخْبَرَنَا يَحْيَى بْنُ حَكِيمٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو قُتَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ ابْنَ عُمَرَ يُصَفِّرُ لِحْيَتَهُ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ لَهُ:‏‏‏‏ فِي ذَلِكَ ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُصَفِّرُ لِحْيَتَهُ.
ترجمہ:
عبید کہتے ہیں کہ  میں نے ابن عمر ؓ کو اپنی داڑھی پیلی کرتے دیکھا، تو ان سے اس کے بارے میں پوچھا؟ انہوں نے کہا: میں نے نبی اکرم  ﷺ  کو اپنی داڑھی زرد  (پیلی)  کرتے ہوئے دیکھا ہے،
قال الشيخ الألباني:  صحيح  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 5243

📚سنن نسائی
کتاب: زینت (آرائش) سے متعلق احادیت مبارکہ
باب: ورس اور زعفران سے داڑھی کو زرد کرنا
حدیث نمبر: 5246
أَخْبَرَنَا عَبْدَةُ بْنُ عَبْدِ الرَّحِيمِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَمْرُو بْنُ مُحَمَّدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا ابْنُ أَبِي رَوَّادٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَلْبَسُ النِّعَالَ السِّبْتِيَّةَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُصَفِّرُ لِحْيَتَهُ بِالْوَرْسِ وَالزَّعْفَرَانِ،‏‏‏‏ وَكَانَ ابْنُ عُمَرَ يَفْعَلُ ذَلِكَ.
ترجمہ:
عبداللہ بن عمر ؓ کہتے ہیں کہ  نبی اکرم  ﷺ  چمڑے کا جوتا پہنتے اور اپنی داڑھی ورس اور زعفران سے پیلی کرتے تھے، اور ابن عمر ؓ بھی ایسا کیا کرتے تھے،
تخریج دارالدعوہ: 
سنن ابی داود/الترجل ١٩ (٤٢١٠)،
(تحفة الأشراف: ٧٧٦٢)، مسند احمد (٢/١١٤)
قال الشيخ الألباني:  صحيح الإسناد  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 5244

اور ایک روایت کے یہ الفاظ ہیں،

📚سنن نسائی
کتاب: زینت (آرائش) سے متعلق احادیت مبارکہ
باب: زدر رنگ سے خضاب کرنا
حدیث نمبر: 5088
أَخْبَرَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الدَّرَاوَرْدِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ ابْنَ عُمَرَ يُصَفِّرُ لِحْيَتَهُ بِالْخَلُوقِ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا أَبَا عَبْدِ الرَّحْمَنِ إِنَّكَ تُصَفِّرُ لِحْيَتَكَ بِالْخَلُوقِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُصَفِّرُ بِهَا لِحْيَتَهُ وَلَمْ يَكُنْ شَيْءٌ مِنَ الصِّبْغِ أَحَبَّ إِلَيْهِ مِنْهَا،‏‏‏‏ وَلَقَدْ كَانَ يَصْبُغُ بِهَا ثِيَابَهُ كُلَّهَا حَتَّى عِمَامَتَهُ. قَالَ أَبُو عَبْد الرَّحْمَنِ:‏‏‏‏ وَهَذَا أَوْلَى بِالصَّوَابِ مِنْ حَدِيثِ قُتَيْبَةَ
ترجمہ:
زید بن اسلم کہتے ہیں کہ  ابن عمر ؓ اپنی ڈاڑھی خلوق سے پیلی کرتے تھے، میں نے کہا: ابوعبدالرحمٰن! آپ اپنی ڈاڑھی خلوق سے پیلی کرتے ہیں؟ کہا: میں نے رسول اللہ  ﷺ  کو دیکھا کہ آپ اس سے اپنی ڈاڑھی پیلی کرتے تھے، اور کوئی بھی رنگ آپ کو اس سے زیادہ پسند نہیں تھا، آپ اس سے اپنے تمام کپڑے یہاں تک کہ اپنی پگڑی بھی رنگتے تھے،
تخریج دارالدعوہ:
  سنن ابی داود/اللباس ١٨ (٤٠٦٤)،
(تحفة الأشراف: ٦٧٢٨)،
ویأتی برقم ٥١١٨ (صحیح الإسناد  )  
وقال الشيخ الألباني:  صحيح الإسناد  
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 5085

وضاحت:
*خلوق ایک قسم کی خوشبو ہے جو کئی چیزوں سے بنتی ہے، اس میں ورس اور زعفران بھی شامل ہے۔ عبداللہ بن عمر رضی الله عنہما کو پیلے رنگ کی اجازت منسوخ ہو جانے کی خبر نہیں مل سکی تھی، پیلا رنگ عورتوں کا رنگ ہونے کے سبب مردوں کے لیے منسوخ کر دیا گیا تھا،اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بعد میں مردوں کو زعفرانی رنگ لگانے سے روک دیا،*

جیسا کہ بخاری ،مسلم اور باقی احادیث کی کتابوں میں یہ بات درج ہے،

📚صحیح مسلم
کتاب: لباس اور زینت کا بیان
باب: مردوں کے لئے زعفران میں رنگے ہوئے کپڑوں کے پہننے کی ممانعت کے بیان میں
(انٹرنیشنل حدیث نمبر: 2101)
(اسلام 360 حدیث نمبر-5506)
حَدَّثَنَا يَحْيَی بْنُ يَحْيَی وَأَبُو الرَّبِيعِ وَقُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ قَالَ يَحْيَی أَخْبَرَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ و قَالَ الْآخَرَانِ حَدَّثَنَا حَمَّادٌ عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ صُهَيْبٍ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّی اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَی عَنْ التَّزَعْفُرِ قَالَ قُتَيْبَةُ قَالَ حَمَّادٌ يَعْنِي لِلرِّجَالِ
ترجمہ:
یحییٰ بن یحیی، ابوربیع قتیبہ بن سعید، یحییٰ حماد بن زید حمد عبدالعزیز بن صہیب، حضرت انس بن مالک ؓ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ نے زعفران میں رنگا ہوا لباس پہننے سے منع فرمایا ، حضرت قتیبہ حماد سے نقل کرتے ہوئے کہتے ہیں یعنی مردوں کے لئے،

تخریج:
(صحیح بخاری حدیث نمبر-5846)
(سنن ابو داؤد حدیث نمبر-4179)
(سنن ترمذی حدیث نمبر-2815)
(سنن نسائی حدیث نمبر-2706)
(مسند احمد حدیث نمبر-11978)

📚صحیح بخاری
کتاب: لباس کا بیان
باب: مردوں کے لئے زعفرانی رنگ کا بیان
حدیث نمبر: 5846
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يَتَزَعْفَرَ الرَّجُلُ.
ترجمہ:
ہم سے مسدد نے بیان کیا، کہا ہم سے عبدالوارث بن سعید نے بیان کیا، ان سے عبدالعزیز نے اور ان سے انس بن مالک ؓ نے بیان کیا کہ  نبی کریم  ﷺ  نے اس سے منع فرمایا کہ کوئی مرد زعفران کے رنگ کا استعمال کرے۔

📚سنن ابوداؤد
کتاب: کنگھی کرنے کا بیان
باب: مردوں کے لئے خلوق کا استعمال کیسا ہے؟
حدیث نمبر: 4176 
حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيل، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا عَطَاءٌ الْخُرَاسَانِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى بْنِ يَعْمَرَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمَّارِ بْنِ يَاسِرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَدِمْتُ عَلَى أَهْلِي لَيْلًا وَقَدْ تَشَقَّقَتْ يَدَايَ، ‏‏‏‏‏‏فَخَلَّقُونِي بِزَعْفَرَانٍ، ‏‏‏‏‏‏فَغَدَوْتُ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ فَلَمْ يَرُدَّ عَلَيَّ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يُرَحِّبْ بِي، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ اذْهَبْ فَاغْسِلْ هَذَا عَنْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَذَهَبْتُ فَغَسَلْتُهُ ثُمَّ جِئْتُ وَقَدْ بَقِيَ عَلَيَّ مِنْهُ رَدْعٌ فَسَلَّمْتُ فَلَمْ يَرُدَّ عَلَيَّ وَلَمْ يُرَحِّبْ بِي، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ اذْهَبْ فَاغْسِلْ هَذَا عَنْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَذَهَبْتُ فَغَسَلْتُهُ ثُمَّ جِئْتُ فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ فَرَدَّ عَلَيَّ وَرَحَّبَ بِي، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْمَلَائِكَةَ لَا تَحْضُرُ جَنَازَةَ الْكَافِرِ بِخَيْرٍ وَلَا الْمُتَضَمِّخَ بِالزَّعْفَرَانِ وَلَا الْجُنُبَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَرَخَّصَ لِلْجُنُبِ إِذَا نَامَ أَوْ أَكَلَ أَوْ شَرِبَ أَنْ يَتَوَضَّأَ.
ترجمہ:
عمار بن یاسر ؓ کہتے ہیں کہ  میں اپنے گھر والوں کے پاس رات کو آیا، میرے دونوں ہاتھ پھٹے ہوئے تھے تو ان لوگوں نے اس میں زعفران کا خلوق  (ایک مرکب خوشبو ہے)  لگا دیا، پھر میں صبح کو رسول اللہ  ﷺ  کی خدمت میں حاضر ہوا اور آپ کو سلام کیا تو آپ نے نہ میرے سلام کا جواب دیا اور نہ خوش آمدید کہا اور فرمایا:  جا کر اسے دھو ڈالو  میں نے جا کر اسے دھو دیا، پھر آیا، اور میرے ہاتھ پر خلوق کا اثر  (دھبہ)  باقی رہ گیا تھا، میں نے آپ  ﷺ  کو سلام کیا تو آپ نے میرے سلام کا جواب دیا اور نہ خوش آمدید کہا اور فرمایا:  جا کر اسے دھو ڈالو  میں گیا اور میں نے اسے دھویا، پھر آ کر سلام کیا تو آپ  ﷺ  نے سلام کا جواب دیا اور خوش آمدید کہا، اور فرمایا:  فرشتے کافر کے جنازہ میں کوئی خیر لے کر نہیں آتے، اور نہ اس شخص کے جو زعفران ملے ہو، نہ جنبی کے  اور آپ  ﷺ  نے جنبی کو رخصت دی کہ وہ سونے، کھانے، یا پینے کے وقت وضو کرلے۔  
تخریج دارالدعوہ:
تفرد بہ أبوداود، (تحفة الأشراف: ١٠٣٧٢)،
وقد أخرجہ: مسند احمد (٤/٣٢٠) وأعاد المؤلف بعضہ فی السنة (٤٦٠١) (حسن  )

📚حَدَّثَنَا حَسَنٌ ، حَدَّثَنَا حَمَّادٌ – يَعْنِي ابْنَ زَيْدٍ – عَنْ سَلْمٍ الْعَلَوِيِّ ، أَنَّهُ سَمِعَ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ يَقُولُ : دَخَلَ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَجُلٌ وَعَلَيْهِ صُفْرَةٌ فَكَرِهَهَا، فَلَمَّا قَامَ الرَّجُلُ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لِبَعْضِ أَصْحَابِهِ : ” لَوْ أَمَرْتُمْ هَذَا أَنْ يَدَعَ هَذِهِ الصُّفْرَةَ “. قَالَهَا مَرَّتَيْنِ أَوْ ثَلَاثًا. قَالَ أَنَسٌ : وَكَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَلَّمَا يُوَاجِهُ رَجُلًا بِشَيْءٍ يَكْرَهُهُ فِي وَجْهِهِ.
حكم الحديث: إسناده حسن،
انس بن مالک رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں کہ,
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے پاس ایک شخص آیا جس پر زرد رنگ تھا ،
تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اسے ناپسند کیا اور پھر جب وہ کھڑا ہو گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے بعض صحابہ کرام سے فرمایا تم نے اسے یہ رنگ دھونے کا کیوں نہیں کہا؟ آپ نے دو یا تین بار ایسا فرمایا، اور انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ بہت کم ایسا ہوتا کہ نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کسی ایسے شخص کے روبرو آ جاتے جس کے چہرے پر کوئی ایسی چیز ہوتی جسے آپ ناپسند کرتے،(یعنی اکثر ایسے شخص سے ملتے نا تھے)
(مسند احمد، حدیث نمبر_12573_حسن)

*لہذا_مردوں کے لئے زعفران کی خوشبو یا اسکا رنگ وغیرہ لگانا بالکل منع ہے،*

_____________&_________

*زعفرانی رنگ کا مردوں کے لئے جائز ہونے کی ایک روایت یہ پیش کی جاتی کہ،*

📚رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ کے جسم پر زعفران کا اثر دیکھا تو پوچھا: یہ کیا ہے؟
انہوں نے کہا: اللہ کے رسول! میں نے ایک عورت سے شادی کر لی ہے، پوچھا: اسے کتنا مہر دیا ہے؟
جواب دیا: گٹھلی کے برابر سونا،
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:
ولیمہ کرو چاہے ایک بکری سے ہی کیوں نہ ہو،
(سنن ابو داؤد،حدیث نمبر_2109)

*اس حدیث میں یہ نہیں ہے کہ انہوں نے زعفران لگائی بلکہ یہ ہے کہ ان کے اوپر زعفران کا اثر تھا،یعنی بدن یا کپڑوں پر کسی جگہ زعفران لگی تھی، اور چونکہ مردوں کے لئے زعفران لگانا درست نہیں تھا ،اسی لیے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان سے سوال کیا کہ یہ کیا ہے؟ تو انہوں نے بتایا کہ میں نے شادی کر لی،یعنی دلہن کے کپڑوں سے مس ہونے کی وجہ سے زعفران کا رنگ ان پر بھی لگ گیا،*

جیسا کہ ایک روایت میں یہ الفاظ ہیں،

📚حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ عَنْ أَبِي عَمْرِو بْنِ حَفْصٍ أَوْ أَبِي حَفْصِ بْنِ عَمْرٍو عَنْ يَعْلَى بْنِ مُرَّةَ قَالَ رَأَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَيَّ خَلُوقًا فَقَالَ أَلَكَ امْرَأَةٌ قَالَ قُلْتُ لَا قَالَ فَاذْهَبْ فَاغْسِلْهُ ثُمَّ لَا تَعُدْ
ترجمہ:
حضرت یعلی ؓ سے مروی ہے کہ ایک مرتبہ نبی ﷺ نے مجھ پر خلوق نامی خوشبو لگی ہوئی دیکھی تو پوچھا کہ کیا تمہاری شادی ہوئی ہے؟ میں نے عرض کیا نہیں، فرمایا تو جا کر اسے دھو اور دوبارہ مت لگانا۔
(مسند احمد حدیث نمبر-17552)
🚫یہ سند کے لحاظ سے ضعیف ہے

*اگرچہ اس مسئلہ میں علماء کا اختلاف ہے،مگر اختلافات سے بچتے ہوئے حق بات یہی ہے کہ مردوں کہ لیے زعفرانی خوشبو اور رنگ لگانا منع ہے،یہاں یہ بات بھی ملحوظ رہے کہ مردوں کے لئے زعفران کی ممانعت بدن اور کپڑے پر لگانے میں ہے،البتہ کھانے پینے کی چیزوں میں زعفران کی ممانعت کا کوئی ثبوت نہیں ملتا*

(( واللہ تعالیٰ اعلم باالصواب ))

📲اپنے موبائل پر خالص قرآن و حدیث کی روشنی میں مسائل حاصل کرنے کے لیے “ADD” لکھ کر نیچے دیئے گئے نمبر پر سینڈ کر دیں،

📩آپ اپنے سوالات نیچے دیئے گئے نمبر پر واٹس ایپ کر سکتے ہیں جنکا جواب آپ کو صرف قرآن و حدیث کی روشنی میں دیا جائیگا,
ان شاءاللہ۔۔!!

⁦  سلسلہ کے باقی سوال جواب پڑھنے۔ 📑
     کیلیئے ہماری آفیشل ویب سائٹ وزٹ کریں

یا ہمارا فیسبک پیج دیکھیں::

یا سلسلہ نمبر بتا کر ہم سے طلب کریں۔۔!!

*الفرقان اسلامک میسج سروس*

آفیشل واٹس ایپ نمبر
                   +923036501765

آفیشل ویب سائٹ
http://alfurqan.info/

آفیشل فیسبک پیج//
https://www.facebook.com/Alfurqan.sms.service2/

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں